Urdu

رنگِ تمکینِ گل و لالہ پریشاں کیوں ہے
گر چراغانِ سرِ رہگزرِ باد نہیں

نہیں گر سر و برگِ ادراکِ معنی
تماشائے نیرنگِ صورت سلامت

اسد ہم وہ جنوں جولاں گدائ بےسروپا ہیں
کہ ہےسرپنجۂ مژگانِ آہو پشتِ خار اپنا


آگہی دامِ شنیدن جس قدر چاہے بچھائے
مدعا عنقا ہے اپنے عالم تقریر کا

تیری فرصت کے مقابل اے عمر
برق کو پابہ حنا باندھتے ہیں

آنکھ کی تصویر سرنامے پہ کھینچی ہے کہ تا
تجھ پہ کُھل جاوے کہ اسے حسراتِ دیدار ہے


غالب
_______________________

میں نے فؔانی ڈوبتی دیکھی ہے نبضِ کائنات
جب مزاجِ یار کچھ برہم نظر آیا مجھے

فانی بدایونی 


نؔیازکہانی سنورے بھائی، ہوش گئے بیہوشی آئی
خودی گئی تب ملی خدائی، سرسوں پھولی آنکھوں میں 

شاہ نیاز احمدؒ 
_______________________

شام ہوتی ہے سحرہوتی ہے، یہ وقتِ رواں
جو کبھی سر پہ میرے سنگِ گراں بن کے گرا
راہ میں آیا کبھی میری ہمالہ بن کر
جو کبھی عقدہ بنا ایسا کہ حل ہی نہ ہوا
اشک بن کرمیری آنکھوں سے کبھی ٹپکا ہے
جو کبھی خونِ جگر بن کہ مژہ پر آیا
آج بےواسطہ یوں گزرا چلاجاتا ہے
جیسے میں کشمکشِ زیست میں شامل ہی نہیں

اخترالایمان
_______________________

گجراپھیکا،میری مانگ ہےسُونی،باسی بن گئےپھول
لوٹ آؤ، تلک بنا لوں، چرن تورے کی دھول

_______________________

میرے غور و فکر کے زاویوں پہ ہیں پہرے ایسے لگے ہوئے
یہ مجال ہے کہ تیرے سوا، کوئی آ تو جائے خیال میں

کؔامل حیدرآبادیؒ
_______________________

کیسی آدابِ نمائش نے لگائیں شرطیں
پھول ہونا ہی نہیں پھول نظر آنا بھی

وؔسیم بریلوی
_______________________

شکیب اپنے تعارف کے لیے یہ بات کافی ہے
ہم اُس سے بچ کے چلتے ہیں جو رستہ عام ہوجائے

شکیب جلالی

_______________________

کوئی جا ہو حرم ہو کہ صنم خانہ ہو
ہم کو نقشِ قدمِ یار پہ سجدہ کرنا

بیدم شاہ وارثیؒ

_______________________
نشاطِ منزل نہیں تو اُن کو کوئی سا اجرِسفر ہی دے دو
وہ رہ نوردِ راہِ جنوں جو پہن کر راہوں کی دھول آئے

_______________________

ترجمہ نوای طاہرہ۱: از تابش دہلوی

تجھ پہ مری نظر پڑے، چہرہ بہ چہرہ، رُو بہ رُو
می ترا غم بیاں کروں، نکتہ بہ نکتہ، مُو بہ مُو
ہجر میں تیرےخونِ دل آنکھ سے ہے مری رواں
دجلہ بہ دجلہ، یم بہ یم، چشمہ بہ چشمہ، جُو بہ جُو
یہ تری تنگئی دیں، یہ خطِ روئےعنبریں
غنچہ بہ غنچہ،گل بہ گل، لالہ بہ لالہ، بُوبہ بُو
ابرووچشم وخال نے صید کیا ہے مرغِ دل
طبع بہ طبع، دل بہ دل، مہر بہ مہر، خُو بہ خُو
تیرے ہی لطفِ خاص نے کردیے جاں و دل بہم
رشتہ بہ رشتہ، نخ بہ نخ، تار بہ تار، پُو بہ پُو
قلب میں طاہرہ کے اب کچھ بھی نہیں تیرے سوا
صفحہ بہ صفحہ، لا بہ لا، پردہ بہ پردہ، تُو بہ تُو

۱۔ اقبال 'جاوید نامہ'

Comments