sign10

a

CHAPTER 10 :

Sign-10:They will be majority from Non Arabs

The following ahadith tells that there would be very few Arabs to fight against Dajjal.

حدثني هارون بن عبدالله. حدثنا حجاج بن محمد قال: قال ابن جريج: حدثني أبو الزبير؛ أنه سمع جابر بن عبدالله يقول: أخبرتني أم شريك؛
أنها سمعت النبي صلى الله عليه وسلم يقول "ليفرن الناس من الدجال في الجبال". قالت أم شريك: يا رسول الله! فأين العرب يومئذ؟ قال "هم قليل".صحیح مسلم

حضرت ام شریک سے روایت ہے کہ اس نےنبی صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا کہ لوگ دجال سے پہاڑوں کی طرف بھاگیں گے ام شریک نے عرض کیا اے اللہ کےرسول صلی اللہ علیہ وسلم ا ن دنوں عرب کہاں ہوں گے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرما وہ بہت کم ہوں گے۔
صحیح مسلم--راوی : ہارون بن عبداللہ حجاج بن محمد ابن جریج، ابوزبیر رضی اللہ تعالیٰ عنہ جابر بن عبداللہ، حضرت ام شریک

Umm Sharik reported: I heard Allah's Messenger (Salallaho alayhay wa sallam) as saying: The people would run away from the Dajjal seeking shelter in the mountains. She said: Where would be the Arabs then in that day? He said: They would be very few.[1]

 

Also the following hadith tells that same thing that Arabs will be very less to fight Dajjal

حدثنا عبد الصمد حدثنا حماد قال حدثنا علي بن زيد عن الحسن عن عاشة أن رسول الله صلى الله عليه وسلم ذكر جهدا يكون بين يدي الدجال فقالوا أي المال خير يومذ قال غلام شديد يسقي أهله الما وأما الطعام فليس قالوا فما طعام المؤمنين يومذ قال التسبيح والتقديس والتحميد والتهليل قالت عاشة فأين العرب يومذ قال العرب يومذ قليل- مسند احمد

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے مروی ہے کہ ایک مرتبہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے خروج دجال کے موقع پر پیش آنے والی تکالیف کا ذکر کیا تو لوگوں نے پوچھا اس زمانے میں سب سے بہترین مال کون سا ہوگا؟ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا وہ طاقتور غلام جو اپنے مالک کو پانی پلا سکے، رہا کھانا تو وہ نہیں، لوگوں نے پوچھا کہ اس زمانے میں مسلمانوں کا کھانا کیا ہوگا؟ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تسبیح و تکبیر اور تحمید و تہلیل، میں نے پوچھا کہ اس دن اہل عرب کہاں ہوں گے؟ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اس زمانے میں اہل عرب بہت تھوڑے ہوں گے- مسند احمد:جلد نہم:حدیث نمبر 4444       حدیث مرفوع            

Narrated from Sayyidna Ayesha Siddiqah(Radil Allah Anha).Once the(future)difficulties at the time of Dajjal's appearance,were mentioned.People asked,"What will be the best type of wealth at that time?"Dear Prophet Muhammad(Salallaho alayhay wa sallam) replied,"That strong slave who can give water to his master.As far as food is concerned,there will be no food.People asked,"What would be the food of Muslims?

Dear Prophet Muhammad(Salallaho alayhay wa sallam) said,"(The food will be)Tasbeeh(Subhan Allah)and Takbeer(Allahuakber) and Tamheed(Alhamdulillah).

I asked, “Where would be the Arabs at that time?”

Dear Prophet Muhammad(Salallaho alayhay wa sallam) replied,

"At that time,the Arabs would be very few(Qaleel)"[2].

 

Also another hadith tells that Non Arab fighters will fight the great Wars at the end of time

 

حدثنا هشام بن عمار. حدثنا الوليد بن مسلم. ثتا عثمان بن أبي العاتكة عن سليمان بن حبيب المحاربي، عن أبي هريرة؛ قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم:
((إذا وقعت الملاحم، بعث الله بعثا من الموالي، هم أكرم العرب فرسا وأجوده سلاحا، يؤيد بهم الدين)).
سنن ابن ماجۃ

، حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیا ن فرماتے ہیں کہ

رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم نے ارشاد فرمایا جب بڑی بڑی لڑائیاں ہوں گی تو اللہ تعالی عجمیوں میں سے ایک لشکر اٹھائیں گے جوعرب سے بڑھ کرشہسوار او ر ان سے بہتر ھتیاروں و الے ہوں گے اللہ تعالی انکے ذریعہ دین کی مدد فرمائیں گے سنن ابن ماجۃ ۔جلد سوم حدیث۹۷۱

 

Narrated Hazrat Abu Huraira(R.A)"When great wars will occur,then Allah subhanahu wa ta ala will rise an Army from the Non Arabs who will be greater riders and will have better weapons than the Arabs. Allah subhahu wa ta ala will support Deen (Islam) by them"[3]

 

Note: Their weapon will be the weapon of Emaan (Faith) as another hadith of Saheeh Muslims will tell that they will conquer Constantinople without materialistic weapons

Imam Mahdi is not living in an Arab area

 

ـ قال أبو داود: وحُدِّثْتُ عن هارون بن المغيرة، قال: ثنا عمرو بن أبي قيس، عن شعيب بن خالد، عن أبي إسحاق قال:قال عليّ رضي اللّه عنه ونظر إلى ابنه الحسن فقال: إن ابني هذا سيدٌ كما سماه النبي صلى اللّه عليه وسلم وسيَخْرُجُ من صُلبه رجلٍ يُسَمَّى باسم نَبِيَّكم صلى اللّه عليه وسلم يُشْبهُهُ في الخُلُقِ، ولايُشْبهُهُ في الخلْقِ، ثم ذكر قصةً: يملأ الأرض عدلاً".. سنن ابوداؤد

امام ابوداؤد فرماتے ہیں کہ مجھ سے ہارون بن مغیرہ، عمرو بن ابی قیس عن شعیب بن خالد عن اسحاق کے واسطہ سے بیان کیا گیا کہ حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے اپنے صاحبزادے سے حضرت حسن کی طرف دیکھ کر فرمایا میرا یہ بیٹا سردار ہوگا جیسے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اس کا نام رکھا تھا اور عن قریب اس کی نسل میں ایک شخص پیدا ہوگا جس کا نام تمہارے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے نام کے مطابق ہوگا وہ اخلاق میں تمہارے نبی کے مشابہ ہوگا لیکن خلقت میں مشابہ نہیں ہوگا. پھر طویل قصہ ذکر کر کے فرمایا کہ وہ زمین کو عدل وانصاف سے بھر دے گا. سنن ابوداؤد:جلد سوم:حدیث نمبر 897 

Hadrat Ali looked at son ,Hassan, and said that this son of mine will be the Leader just like he was named by Dear Prophet Muhammad salallaho alayhay wa sallam and soon a person will be born from his progeny whose name will be like the name of your Prophet salallaho alayhay wa sallam.He will have Akhlkaq(Character) like your Prophet Salallaho alayahay wa sallam but his Khalaq(appearance) will not be like him.Then told a long story and then said that he will fill the earth with Justice.[4]

 

Family of Prophet is all over the World adopting different cultures.So Imam Mahdi will be from the family of the Prophet salallaho alayhay wa sallam but living among the Bani Israel and therefore not wearing clothes like the Arabs.

 

Imam Mahdi dress is not from the Arabs

 

We already have seen this hadith before.

(حديث مرفوع) حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ سَعِيدٍ الرَّازِيُّ ، ثنا عَلِيُّ بْنُ الْحُسَيْنِ ، ثنا عَنْبَسَةُ بْنُ أَبِي صَغِيرَةَ ، ثنا الأَوْزَاعِيُّ ، عَنْ سُلَيْمَانَ بْنِ حَبِيبٍ ، قَالَ : سَمِعْتُ أَبَا أُمَامَةَ ، يَقُولُ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " سَيَكُونُ بَيْنَكُمْ وَبَيْنَ الرُّومِ أَرْبَعُ هُدَنٍ ، تَقُومُ الرَّابِعَةُ عَلَى يَدِ رَجُلٍ مِنْ أَهْلِ هِرَقْلَ يَدُومُ سَبْعَ سِنِينَ " ، فَقَالَ لَهُ رَجُلٌ مِنْ عَبْدِ الْقَيْسِ يُقَالُ لَهُ الْمُسْتَوْرِدُ بْنُ خِيلانَ : يَا رَسُولَ اللَّهِ ، مَنْ إِمَامُ النَّاسِ يَوْمَئِذٍ ؟ قَالَ : " مِنْ وُلْدِ أَرْبَعِينَ سَنَةً كَأَنَّ وَجْهَهُ كَوْكَبٌ دُرِّيٌّ ، فِي خَدِّهِ الأَيْمَنِ خَالٌ أَسْوَدُ ، عَلَيْهِ عَبَاءَتَانِ قَعْوَايَتَانِ ، كَأَنَّهُ مِنْ رِجَالِ بَنِي إِسْرَائِيلَ ، يَمْلِكُ عِشْرِينَ سَنَةً يَسْتَخْرِجُ الْكُنُوزَ ، وَيَفْتَحُ مَدَائِنَ الشِّرْكِ " .
. رقم الحديث: 7367.الكتب 187 المعجم الكبير للطبراني

 

ابو امامہ روایت فرماتے ہیں کہ رسول اللہ صلّی اللہ علیہ وآلہ وسلّم نے فرمایا کہ تمھارے اور روم کے درمیان چار مرتبہ صلح ہوگی۔ چوتھی صلح ایسے شخص کے ہاتھ پر ہوگی جو آل ہرقل سے ہوگا اور یہ صلح سات سال تک برابر قائم رہے گی۔ رسو ل اللہ صلّی اللہ علیہ وآلہ وسلّم سے پوچھا گیا کہ اس وقت مسلمانوں کا امام کون شخص ھوگا۔ آپ صلّی اللہ علیہ وآلہ وسلّم نے فرمایا کہ وہ شخص میری اولاد میں سے ہوگا، اور وہ دو قطوانی عبائیں (بنی اسرائیل کا لباس) پہنے ہوگا، بلکل ایسا معلوم ہوگا جیسا بنی اسرائیل کا کوئی شخص ، دس سال حکومت کرے گا، زمین سے خزانوں کو نکالے گا اور مشرکین کے شہروں کو فتح کرے گا ۔
. رقم الحديث: 7367.الكتب 187 المعجم الكبير للطبراني

Narrated Hazrat Umama reported Rasulullah (Sallallahu Alayhi Wa alay he wa  sallam) said: You and the Romans(Christians) will have four peace treaties . The fourth peace would be at the hand of a person who would be from the Al-e-Harqul( family of  Roman Kind Harqul).This peace treaty would be for seven years. Rasulullah (Sallallahu Alayhi Wasallam) was asked who would be the Imam of the Muslims at that time. Rasulullah (Sallallahu Alayhi Wasallam) said” That person would be from my family,his age would be 40 years ,his face would be bright as a start and a black spot would be on his right cheek.He would be wearing two Qutwani Cloaks.He will appear exactly as the person from Bani Israeel. He will rule for 20 years and will conquer the cities of the Mushrikeen(Idolaters) [5]

 

In this hadith we see Mahdi is wearing the dress of Bani Israel and not the dress of Arabs.

Infact woolen clothes cannot be worn in the hot climate of the Arabia.

Abdunance of Money will put Many Arabs in Afflictions

 

The Arab downfall in the above hadith will be due to abundance of Money among Arabs as told in the following hadith

 

عن عوف بن مالک قال اتیت النبی صلی اللہ علیہ و سلم فی غزوہ تبو ک وھوفی قبۃ من اَدَمِ فقال اعدد ستاّ بین یدی الساعتہ موتی۔ثم فتح بیت المقدس ثم موتان ثم یاخذ فیکم کقعاس الغنم ۔ثم استفاضۃ المال حتی یعطی الرجل مائتہ دینار فعیظل ساخطا ثُمِّ فتنہ لا یبقی بیت من ا لعرب الا دخلتہُ ثُمِّ ھدنۃ تکونُ بینکُم وبین بنی الاصفر فَیَغد رون فیاتونکم تحت ثمانین غایۃ تحت کل غایۃ تحت کل غایۃ اثنا عشر الفا
(رواہ بخاری)

ترجمۃ۔ عوف بن مالک سے روایت ھے کہ میں غزوہ تبوک میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کی خدمت میں حاضر ھوا اور آپ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم چمڑے کے خیمے میں تشریف فرما تھے۔آپ صلی اللہ علیہ وآ لہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ قیامت سے پہلے چھ باتیں گن رکھو سب سے پھلے میری وفات،پھر بیت المقدس کی فتح پھر تم میں بیماری عام ھو جایے گی جس طرح بکریوں میں وبائ امراض پھیل جاے ۔پھر مال کی بہتات ھوگی حتی کہ ایک شخص کو سو سو دینا ر دے جأیں گے اور وہ خوش نہ ھوگا پھر وہ تم سے عہد شکنی کریں گے اور اسی ۸۰ جھنڈوں کے ساتھ تم پر چڑھای کریں گے اور ھر جھنڈے کے نیچے بارہ ھزار کا لشکر ھوگا۔ رواہ بخاری

Auf bin Malik radhiyallahu anhu says: I came to Rasulullah sallallahu alayhi wasallam  while he was in his skin tent during the Tabuk expedition. He said to me, "Count six things before the advent of Qiyamah:

·        My death.

·        The conquest of Jerusalem.

·        Mass deaths amongst you people, just as when sheep die in large numbers during an epidemic.

·        Abundance of wealth to such an extent that if a person were to be given a hundred Dinars he will still not be satisfied.

·        General Afflictions(among Arabs) , that no Arab household will be spared from it .

·         Then a life of peace as a result of a peace agreement between you and the Banil Asfaar (Sons of the Blonde i.e Romans as they have yellow hair) which they will break and attack you with a force consisting of eighty flags and under each flag will be an army of twelve thousand men."[6]

 

 This hadith clearly tells that after the abundance of Money among the Arabs,they will have fitnas (Afflictions) among themselves.

The following hadith which further confirms the above Hadith.

This hadith tells that how Arabs will get rich and make Tall Buildings

.
- حدثنا عبد الله حدثني أبي حدثنا أبو النضر حدثنا عبد الحميد حدثنا شهر حدثني عبد الله بن عباس أن:........ long hadith part of a... قال: أجل يا رسول الله فحدثني قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: إذا رأيت الأمة ولدت ربتها أو ربها ورأيت أصحاب الشاء تطاولوا بالبنيان ورأيت الحفاة الجياع العالة كانوا رؤوس الناس فذلك من معالم الساعة وأشراطها قال: يا رسول الله ومن أصحاب الشاء والحفاة الجياع العالة قال: العرب. مسند احمد

اور فرمایا کہ ایک مرتبہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم ایک مجلس میں تشریف فرما تھے کہ حضرت جبرئیل علیہ السلام آگئے، ......   long hadith part of  a..... نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا  جب تم دیکھو کہ لونڈی اپنی مالکن کو جنم دے رہی ہے، اور بکریاں چرانے والے بڑی بڑی عمارتوں پر ایک دوسرے سے فخر کرنے لگے ہیں، ننگے بھوکے اور محتاج لوگ سردار بن چکے ہیں تو یہ قیامت کی علامات اور نشانیوں میں سے ہے، انہوں نے پوچھا یا رسول اللہ! صلی اللہ علیہ وسلم یہ بھیڑ (بکریاں)چرانے چرانے والے، ننگے پاؤں، بھوکے اور محتاج لوگ کون ہیں؟ فرمایا اہل عرب۔ مسند احمد:جلد دوم:حدیث نمبر 1035    حدیث متواتر حدیث مرفوع      

(Part of a Long Hadith)Prophet Muhammad Salallho alayhay wa sallam said that, “The female slave should give birth to her mistress, and you see shepherds of sheep (and goats) competing in making tall buildings, and you see bare footed, hungry and poor people becoming rulers,then this is among the sings of the (coming of)Qiyamah(Judgement Day)'People asked, “O Rasul Allah(salallaho alayhay wa sallam)who are these shepherds of sheep(& Goat),the bare footed,hungry & needy(poor)people? Rasul Allah(salallaho alayhay wa sallam) replied, “The Arab People”.[7]

Note: I have written the above hadith completely with full text in the end of this chapter

Note: It’s a pity that today many people have quoted this hadith but intentionally removed the final answer of Dear Prophet Muhammad (salallaho alayhay wa sallam) about the The Arabs.

 

The first attack on Imam Mahdi will by Arab Rulers

حدثنا أبو العباس محمد بن يعقوب ثنا الربيع بن سليمان ثنا أسد بن موسى ثنا بن أبي ذئب وحدثنا أبو عبد الله محمد بن يعقوب الحافظ واللفظ له ثنا حامد بن أبي حامد المقري ثنا إسحاق بن سليمان الرازي قال سمعت بن أبي ذئب يحدث عن سعيد بن سمعان قال سمعت أبا هريرة رضى الله تعالى عنه يحدث أبا قتادة أن النبي صلى الله عليه وسلم قال يبايع لرجل بين الركن والمقام ولن يستحل هذا البيت إلا أهله فإذا استحلوه فلا تسأل عن هلكة العرب ثم تجيء الحبشة فتخربه خرابا لا يعمر بعده أبدا وهم الذين يستخرجون كنزه هذا حديث صحيح على شرط الشيخين ولم يخرجاه ----  مستدرک حاکم (کتاب الفتن )حدیث 8395 ، مصنف ابن شیبہ (کتاب الفتن )حدیث136

حضرت ابوقتادہ سے مروی ھے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآ لہ وآلہ وسلم نے فرمایا : ایک شخص سے حجر اسود اور مقام ابر ا ھیم کے درمیان بیعت کی جاے گی اور کعبہ کی عزت و حرمت کو اس کے اھل ہی پامال کریں گے اور جب اسکی حرمت پامال کر دی جاے گی تو پھر عرب کی تباھی کا حال مت پوچھو (یعنی ان پر اس قدر تباہی آے گی جو بیان سے باہر ھے) پھر حبشی چڑھای کر دیں گے اور مکہ مکرمہ کو بلکل ویران کر دیں گے اور یہی کعبہ کے (مدفون) خزانہ کو نکالیں گے ۔ مستدرک حاکم (کتاب الفتن )حدیث 8395 ، مصنف ابن شیبہ (کتاب الفتن )حدیث136 

Narrated by Hazrat Abu Huraira(radi Allah Anho) from Hazrat Abu Qatada:Dear Prophet (Salallaho alayahy wa sallam) said: People will be given allegiance (Beyat) to person (i.e Mahdi) between the Ruken(Hajr-e-Aswad) and Mukam(Mukam-e-Ebraheem) and  no one else but the same people who are related to that place(citizens of Makkah) will destroy the respect of Kabah(as they will attack Mahdi in Kabah where fighting is forbidden) and when they will declare it Halal then do not ask about the killing of the ARABS(there will be a mass killing of arabs).Then Ethopians(Africans) will come and they will desolate it in such a way that it would never be a habitat and these will be the people who will take out its treasure.[8]

The Rulers of Aarabia will suffer a massive killing by hands of Mahdi’s followers from the East

 

أخبرنا أبو عبد الله الصفار حَدَّثَنَا محمد بن إبراهيم بن أرومة حَدَّثَنَا الحسين بن حفص حَدَّثَنَا سفيان عن خالد الحذاء عن أبي قلابة عن أبي أسماء عن ثوبان رضي الله عنه قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم يقتتل عند كنزكم ثلاثة كلهم بن خليفة ثم لاَ يصير إلى واحد منهم ثم تطلع الرايات السود من قبل المشرق فيقاتلونكم قتالا لم يقاتله قوم ثم ذكر شيئا فقال إذا رأيتموه فبايعوه ولو حبوا على الثلج فإنه خليفة الله المهدي

هَذَا حَدِيثٌ صَحِيحٌ على شرط الشيخين

ترجمۃ۔ حضرت ثوبان سے روایت ھے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا کہ تمھارے ایک خزانے کی خاطر تین شخص قتال کریں گے( اورمارے جائیں گے) تینوں آدمی حکمران کے بیٹے ھوں گے لیکن وہ خزانہ ان میں سے کسی کو نہیں ملے گا پھر مشرق کی جانب سے کالے جھنڈے نمودار ھوں گے وہ تم کو ایسا قتل کریں گے کہ یس سے قبل کسی نے ایسا قتل نہیں کیا ھوگا۔اس کے بعد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم نے کچھ باتیں ذکر فرمائں جو مجھے یاد نہیں پھر فرمایا ک جب تم ان کو دیکھو تو ان سے بیعت کر لو چاھے تمھیں گھٹنوں کے بل برف کے اوپر گھسٹ کر جانا پڑے کیونکہ وہ اللہ کے خلیفہ مہدی ھوں گے (رواہ حاکم مستد رک)۔

Thawban (R.A) reported that Dear Propet(salallaho alayhay wa sallam) said, “ Three people will fight for your treasure (and get killed).All three of them will be sons of a Ruler but none of them will get the treasure. Then Black Flags will appear from the East & will kill you as no one (in History) has killed you before. Then Dear Prophet(salallaho alayhay wa alay hesallam) said soemthing that I didn’t remember.Then again Dear Prophet(salallaho alayhay wa alay he sallam) said if you see him then give him your allegiance, even if you have to crawl over ice, because he is the Khalifah of Allah, the Mahdi.This Hadith is most Authentic(Saheeh) according to the conditions of Saheeh Bokhari & Saheeh Muslim.[9]

 

The 2nd attack on Mahdi will be by the Arab Army of Syria & will  be devoured in Earth in Madinah city of  Arabian Peninsula

حدثنا قتيبة بن سعيد وأبو بکر بن أبي شيبة وإسحق بن إبراهيم واللفظ لقتيبة قال إسحق أخبرنا و قال الآخران حدثنا جرير عن عبد العزيز بن رفيع عن عبيد الله ابن القبطية قال دخل الحارث بن أبي ربيعة وعبد الله بن صفوان وأنا معهما علی أم سلمة أم المؤمنين فسألاها عن الجيش الذي يخسف به وکان ذلک في أيام ابن الزبير فقالت قال رسول الله صلی الله عليه وسلم يعوذ عاذ بالبيت فيبعث إليه بعث فإذا کانوا ببيدا من الأرض خسف بهم فقلت يا رسول الله فکيف بمن کان کارها قال يخسف به معهم ولکنه يبعث يوم القيامة علی نيته وقال أبو جعفر هي بيدا المدينة. صحیح مسلم

قتیبہ بن سعید، ابوبکر بن ابی شیبہ، اسحاق بن ابراہیم، قتیبہ، اسحاق ، جریر، عبدالعزیز بن رفیع سے روایت ہے کہ میں حارث بن ابی ربیعہ اور عبداللہ بن صفوان کے ہمراہ ام المومنین ام سلمہ کی خدمت میں حاضر ہوا اور ان دونوں نے سیدہ سے اس لشکر کے بارے میں سوال کیا جسے ابن زبیر کی خلافت کے دوران دھنسایا گیا تھا تو سیدہ نے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ایک پناہ لینے والا بیت اللہ کی پناہ لے گا پھر اس کی طرف لشکر بھیجا جائے گا وہ جب ہموار زمین میں پہنچے گا تو انہیں دھنسا دیا جائے گا میں نے عرض کیا اے اللہ کے رسول جس کو زبرد ستی اس لشکر میں شامل کیا گا ہو اس کا کیا حکم ہے آپ نے فرمایا اسے بھی ان کے ساتھ دھنسا دیا جائے گا لیکن قیامت کے دن اسے اس کی نیت پر اٹھایا جائے گا ابوجعفر نے کہا بیداء سے مدینہ مراد ہے۔ صحیح مسلم:جلد سوم:حدیث نمبر .2740. متفق علیہ 2   

Harith b Abi Rabi'a and 'Abdullah b. Safwan both went to Umm Salama, the Mother of the Faithful, and they asked her about the army which would be sunk in the earth, and this relates to the time when Ibn Zubair (was the governor of Mecca). She reported that Allah's Messenger (may peace be upon him) had said that a seeker of refuge would seek refuge in the Sacred House and an army would be sent to him (in order to kill him) and when it would enter a plain ground, it would be made to sink. I said: Allah's Messenger, what about who was forced to join them?? Thereupon he said: He would be made to sink along with them but he would be raised on the Day of Resurrection on the basis of his intention. Abu Ja'far said. 'This plain ground means the plain ground of Medina.[10]

 

 

حدثنا يونس وحسن بن موسى قالا حدثنا حماد يعني ابن سلمة عن علي بن زيد عن الحسن أن أم سلمة قالت قال حسن عن أم سلمة قالت بينما رسول الله صلى الله عليه وسلم مضطجعا في بيتي إذ احتفز جالسا وهو يسترجع فقلت بأبي أنت وأمي ما شأنك يا رسول الله تسترجع قال جيش من أمتي يجيون من قبل الشام يؤمون البيت لرجل يمنعه الله منهم حتى إذا كانوا بالبيدا من ذي الحليفة خسف بهم ومصادرهم شتى فقلت يا رسول الله كيف يخسف بهم جميعا ومصادرهم شتى فقال إن منهم من جبر إن منهم من جبر ثلاثا حدثنا حسن حدثنا حماد بن سلمة عن أبي عمران الجوني عن يوسف بن سعد عن عاشة عن النبي صلى الله عليه وسلم مثله حدثنا يونس حدثنا حماد عن أبي عمران الجوني عن يوسف بن سعد عن أبي سلمة عن عاشة بمثله- مسند احمد

حضرت ام سلمہ سے مروی ہے کہ ایک مرتبہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم میرے گھر میں لیٹے ہوئے تھے کہ اچانک ہڑ بڑا کر اٹھ بیٹھے ، اور انا اللہ پڑھنے لگے ، میں نے عرض کیا میرے ماں باپ آپ پر قربان ہوں یا رسول اللہ ! کیا بات ہے کہ آپ انا للہ پڑھ رہے ہیں؟ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا امت کا ایک لشکر شام کی جانب سے آئے گا اور ایک آدمی کو گرفتار کرنے کے لئے بیت اللہ کا قصد کرے گا، اللہ اس آدمی کی اس لشکر سے حفاظت فرمائے گا اور جب وہ لوگ ذوالحلیفہ سے مقام بیداء کے قریب پہنچیں گے تو ان سب کو زمین میں دھنسا دیا جائے گا اور انہیں مختلف جگہوں سے قیامت کے دن اٹھایا جائے گا، میں نے عرض کیا کہ اے اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم ! یہ کیا بات ہوئی کہ ان سب کو دھنسایا تو اکٹھے جائے گا اور اٹھایا مختلف جگہوں سے جائے گا؟ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے تین مرتبہ فرمایا کہ اس لشکر میں بعض لوگوں کو زبر دستی شامل کرلیا گیا ہوگا۔گزشتہ حدیث اس دوسری سند سے بھی مروی ہے۔گزشتہ حدیث اس دوسری سند سے حضرت عائشہ سے بھی مروی ہے۔ مسند احمد:جلد نہم:حدیث نمبر 6143  حدیث مرفوع            

Narrated by Mother of the faithful, Hadrat Umme Salma(r.A) that once dearest Prophet Muhammad Salallaho alayhay wa sallam) was sleeping in my home,suddenly he(salallaho alayhay wa sallam) woke and said Inna Lillah... I asked May my mother and father sacrfice upon you..Ya Rasul Allah salallaho alayhay wa sallam)..what is it? Why you are saying Inna Lillah...Dearest Prophet Muhammad(Salallaho alayhay wa sallam) said An army from my Ummah(nation) will come from Shaam Syria) to capture a person in Baitullah(Kaabah).Allah subhanahu will protect that person from this Army and when they will reach from ZUL-KHALIFA to MAQAM BAIDA,then they will all swallowed by Earth and will rise from different places on the Judgement day.I asked "Why is it that they will be swallowed in earth at same place but will rise at different places (on Judgement day).Dearest Prophet salallaho alayhay wa sallam said three times that "some of the people will be taken in this army by force".[11]

The 3rd Fight of Imam Mahdi’s followers will be with an Arab from Quraish

 

حدثنا عبد الصمد وحرمي المعنى قالا حدثنا هشام عن قتادة عن أبي الخليل عن صاحب له عن أم سلمة أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال يكون اختلاف عند موت خليفة فيخرج رجل من المدينة هارب إلى مكة فيأتيه ناس من أهل مكة فيخرجونه وهو كاره فيبايعونه بين الركن والمقام فيبعث إليهم جيش من الشام فيخسف بهم بالبيدا فإذا رأى الناس ذلك أتته أبدال الشام وعصاب العراق فيبايعونه ثم ينشأ رجل من قريش أخواله كلب فيبعث إليه المكي بعثا فيظهرون عليهم وذلك بعث كلب والخيبة لمن لم يشهد غنيمة كلب فيقسم المال ويعمل في الناس سنة نبيهم صلى الله عليه وسلم ويلقي الإسلام بجرانه إلى الأرض يمكث تسع سنين قال حرمي أو سبع. مسند احمد

 حضرت ام سلمہ سے مروی ہے کہ نبی علیہ السلام نے ارشاد فرمایا ایک خلیفہ کی موت کے وقت لوگوں میں نئے خلیفہ کے متعلق اختلاف پیدا ہوجائے گا اس موقع پر ایک آدمی مدینہ منورہ سے بھاگ کرمکہ مکرمہ چلا جائے گا، اہل مکہ میں سے کچھ لوگ اس کے پاس آئیں گے اور اسے اس کی خواہش کے بر خلاف اسے باہر نکال کر حجر اسود اور مقام ابراہیم کے درمیان اس سے بیعت کر لیں گے، پھر ان سے لڑنے کے لئے شام سے ایک لشکر روانہ ہوگا جسے مقام بیداء میں دھنسا دیا جائے گا جب لوگ یہ دیکھیں گے تو ان کے پاس شام کے ابدال اور اعراض کے عصائب (اولیاء کا ایک درجہ) آ کر ان سے بیعت کر لیں گے۔پھرقریش میں سے ایک آدمی نکل کر سامنے آئے گا جس کے اخوال بنوکلب ہوں گے، وہ مکی اس قریشی کی طرف ایک لشکربھیجے گا جو اس قریشی پر غالب آجائے گا اس لشکر یاجنگ کو بعث کلب کہا جائے گا اور وہ شخص محرم ہوگا جو اس غزوے کے مال غنیمت کی تقسم کے موقع پر موجود نہ ہو گا وہ مالت ودولت تقسم کرے گا اور نبی علیہ السلام کی سنت کے مطابق عمل کرے گا اور اسلام زمین پر اپنی گردن ڈال دے گا اور وہ آدمی نوسال تک زمین میں رہے گا۔ مسند احمد:جلد نہم:حدیث نمبر 6581  

Narrated by Umme Salma (r.A) that dearest Prophet Muhammad(salallaho alayhay wa sallam) that disagreement will occur after the death of a Caliph(note here Khalifah doesnt necessarily  mean a Just Caliph of Islam.It can mean a King),then a person will flee from Madinah to Makkah.Some of the people in Makkah will come to him and take him out against his will and will do allegiance (Beyah) to him between Hajar Aswad(black stone) and Maqam Ibrahim.Then an army from Sham(syria) will come to attack to him but will be devoured by earth at the place of BAIDAH.When people will see this,then Abdal of Sham(Syria) and Asaeb of Iraq (Abdal & Asaeb is a level of pious people from Shaam & Iraq respectively and their number is 40 according to other narrations) will come and take allegiance(beyah) of him.Then a person from Quraish will come forward ,whose maternal family will be from Bani Kulaib(a branch of Banu Tamim).That person in Makkah will send an army towards that Qureshi and will overcome him.This battle will be called the BATH KULAIB and a person is at great loss if he is not present at the distribution of the booty of that Ghazwa(battle).He will distribute the riches and act upon the sunnah of Prophet Alayhay salam and Islam will put its neck on the earth(i.e Islam will spread)and he will rule for 9 years on earth[12].

An Arab tribe Banu Kulaib (Banu Tamim) will be made slaves by Mahdi

 

حدثنا سليمان بن بلال عن كثير بن زيد عن الوليد بن رباح عن أبي هريرة رضى الله تعالى عنه مرفوعا المحروم من حرم غنيمة كلب ولو عقالا والذي نفسي بيده لتباعن نساءهم على درج دمشق حتى ترد المرأة من كسر يوجد بساقها هذا حديث صحيح الإسناد ولم يخرجاه

حضرت ابوہریرہ سے روایت ھے کہ رسول اللہ صلیّ اللہ علیہ وسلّم نے فرمایا کہ محروم وہ شخص ہے جو کلب (قبیلہ بنو تمیم کی براہ راست شاخ) کی غنیمت سے محروم رہا۔ اگرچہ ایک عقال ہی کیوں نہ ہو۔ اس ذات پاک کی قسم جس کی قدرت میں میری جان ہے۔ بلا شبہ کلب کی عورتیں (بحیثیت لونڈی کے) دمشق کے راستے پر فروخت ہو ں گی ، یہاں تک کہ ( ان میں سے) ایک عورت پنڈلی ٹوٹی ہونے کے باعث واپس کر دی جا أ گی۔
(مستدرک حاکم۔ باب الفتن و ملاحم، حدیث نمبر 8329 )

Narrated by Abu Huraira that Dear Prophet Muhammad(Salallaho alayhay wa sallam) said that : “Disappointed will be the one who does not receive the booty of Kalb even if it a single Aqal(a small unit).I swear by the Name of the One who holds my life,no doubt the women of Kulaib will be sold (as slaves) in the way to Damascus until one of the women will be returned back because of broken ankle.[13]

 

Previously in one hadith it had been told that Arabs are not be made as slaves but in the above authentic hadith ,permission is given to Muslims to make slaves of the Arabs.This permission is given in the end times

Banu Kulaib are Banu Tamim

 

Banu Kulaib are direct descendants of Banu Tamim as we can see in the family background of Ibn Jarir ( one of the greatest and most celebrated Muslim poets).It stated

“Abu Hazra Jarir Ibn Atiya ibn Khudaifa (surnamed al-khatafa) Ibn Badr Ibn Salama Ibn Auf Ibn Kulaib Ibn Yarbu Ibn Hanzala Ibn Malik Ibn Zaid Manat Ibn Tamim Ibn Murr at-Tamimim (desended from Tamim)”.[14]

 

The Rule of Quraish will be over

 

حدثنا علي بن محمد حدثنا عبد الرحمن المحاربي عن إسمعيل بن رافع أبي رافع عن أبي زرعة السيباني يحيی بن أبي عمرو عن عمرو بن عبد الله عن أبي أمامة الباهلي قال خطبنا رسول الله صلی الله عليه وسلم فکان أکثر خطبته حديثا حدثناه عن الدجال..... Its a part of a Long Hadith ..... ثم صلوا قال رسول الله صلی الله عليه وسلم فيکون عيسی ابن مريم عليه السلام في أمتي حکما عدلا وإماما مقسطا يدق الصليب ويذبح الخنزير ويضع الجزية ويترک الصدقة فلا يسعی علی شاة ولا بعير وترفع الشحنا والتباغض وتنزع حمة کل ذات حمة حتی يدخل الوليد يده في في الحية فلا تضره وتفر الوليدة الأسد فلا يضرها ويکون الذب في الغنم کأنه کلبها وتملأ الأرض من السلم کما يملأ الإنا من الما وتکون الکلمة واحدة فلا يعبد إلا الله وتضع الحرب أوزارها وتسلب قريش ملکها وتکون الأرض کفاثور الفضة تنبت نباتها بعهد آدم حتی يجتمع النفر علی القطف من العنب فيشبعهم ويجتمع النفر علی الرمانة فتشبعهم ويکون الثور بکذا وکذا من المال وتکون الفرس بالدريهمات قالوا يا رسول الله وما يرخص الفرس قال لا ترکب لحرب أبدا قيل له فما يغلي الثور قال تحرث الأرض....... Its a part of a Long Hadith... سنن ابن ماجہ

علی بن محمد، عبدالرحمن محاربی، اسماعیل بن رافع ابی رافع، ابی زرعہ شیبانی، یحییٰ بن ابی عمرو حضرت ابوامامہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ہم کو خطبہ سنایا تو بڑا خطبہ آپ کا دجال سے متعلق تھا آپ نے دجال کا حال ہم سے بیان کیا اور ہم کو اس سے ڈرایا ....... Its a part of a Long Hadith... اور آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا حضرت عیسیٰ میری امت میں ایک عادل حاکم اور منصف امام ہوں گے اور صلیب کو جو نصاری لٹکائے رہتے ہیں) توڑ ڈالیں گے۔ اور سور کو مار ڈالیں گے اس کا کھانا بند کرا دیں گے اور جزیہ موقوف کر دیں گے (بلکہ کہیں گے کافروں سے یا مسلمان ہو جاؤ یا قتل ہونا قبول کرو اور بعضوں نے کہا جزیہ لینا اس وجہ سے بند کر دیں گے کہ کوئی فقیر نہ ہوگا۔ سب مالدار ہوں گے پھر جزیہ کن لوگوں کے واسطے لیا جائے اور بعضوں نے کہا مطلب یہ ہے کہ جزیہ مقرر کر دیں گے سب کافروں پر یعنی لڑائی موقوف ہو جائے گی اور کافر جزئیے پر راضی ہو جائیں گے اور صدقہ (زکوة لینا) موقوف کر دیں گے تو نہ بکریوں پر نہ اونٹوں پر کوئی زکوة لینے والا مقرر کریں گے اور آپس میں لوگوں کے کینہ اور بغض اٹھ جائے گا اور ہر ایک زہریلے جانور کا زہر جاتا رہے گا۔ یہاں تک کہ بچہ اپنا ہاتھ سانپ کے منہ میں دے دے گا وہ کچھ نقصان نہ پہنچائے گا اور ایک چھوٹی بچی شیر کو بھگا دے گی وہ اسکو ضرر نہ پہنچائے گا اور بھیڑ یا بکریوں میں اس طرح رہے گا جیسے کتا، جو ان میں رہتا ہے اور زمین صلح سے بھر جائے گی جیسے برتن پانی سے بھرجاتا ہے اور سب لوگوں کا کلمہ ایک ہو جائے گا سواۓ خدا کے کسی کی پرستش نہ ہوگی (تو سب کلمہ لا الہ الا اللہ پڑھیں گے) اور لڑائی اپنے سب سامان ڈال دے گی۔ یعنی ہتھیار اور آلات اتار کر رکھ دیں گے مطلب یہ ہے کہ لڑائی دنیا سے اٹھ جائے گی اور قریش کی سلطنت جاتی رہے گی اور زمین کا یہ حال ہوگا کہ جیسے چاندی کی سینی (طشت) وہ اپنا میوہ ایسے آگائے گی جیسے آدم کے عہد میں اگاتی تھی۔ (یعنی شروع زمانہ میں جب زمین میں بہت قوت تھی) .........continued سنن ابن ماجہ:جلد سوم:حدیث نمبر 958 

Abu Umamah al-Bahili said, "The Prophet (sallallahu alayhe wa sallam)delivered a speech to us, most of which dealt with the Dajjal and warned us against him…… Its a part of a Long Hadith………………………………

The Prophet (sallallahu alayhe wa sallam) said, "Jesus son of Mary will be a just administrator and leader of my Ummah. He will break the cross, kill the pigs, and abolish the Jizyah (tax on non-Muslims). He will not collect the Sadaqah,* so he will not collect sheep and camels. Mutual enmity and hatred will disappear. Every harmful animal will be made harmless, so that a small boy will be able to put his hand into a snakes mouth without being harmed, a small girl will be able to make a lion run away from her, and a wolf will go among sheep as if he were a sheepdog. The earth will be filled with peace as a container is filled with water. People will be in complete agreement, and only Allah will be worshipped. Wars will cease, and the authority of Quraysh will be taken away. The earth will be like a silver basin, and will produce fruits so abundantly……long hadith continues[15]

Bani Israeli Prophet Eisa Alayhay Salam will rule

 

حدثنا قتيبة حدثنا الليث بن سعد عن ابن شهاب عن سعيد بن المسيب عن أبي هريرة أن رسول الله صلی الله عليه وسلم قال والذي نفسي بيده ليوشکن أن ينزل فيکم ابن مريم حکما مقسطا فيکسر الصليب ويقتل الخنزير ويضع الجزية ويفيض المال حتی لا يقبله أحد قال أبو عيسی هذا حديث حسن صحيح. جامع ترمذی

 قتیبہ، لیث، ابن شہاب، سعید بن مسیب، حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا اس ذات کی قسم جس کے قبضہ میں میری جان ہے عنقریب لوگوں میں عیسیٰ بن مریم رضی اللہ عنہ نازل ہوں گے جو عدل اور انصاف کے ساتھ حکومت کریں گے صلیب کو توڑ دیں گے خنزیر کو قتل کریں گے جزیے کو موقوف کر دیں گے اور اتنا مال تقسیم کریں گے کہ لوگ قبول کرنا چھوڑ دیں گے یہ حدیث حسن صحیح ہے. جامع ترمذی:جلد دوم:حدیث نمبر 117 

Sayyidina Abu Huraira (RA)  reported that the Prophet (SAW)  said, “By Him in Whose hand is my soul, Ibn Maryam(Eisa Alayhay Salam) will soon descend among you He will rule justly. He will break the cross, kill swine and abolish the jizyah, and wealth will flow to such abundance that no one will take it.”[16]

Quran explains that why the Rule of the Quraish will be over.

وَمَا أَرْسَلْنَا مِنْ رَسُولٍ إِلَّا بِلِسَانِ قَوْمِهِ لِيُبَيِّنَ لَهُمْ ۖ فَيُضِلُّ اللَّهُ مَنْ يَشَاءُ وَيَهْدِي مَنْ يَشَاءُ ۚ وَهُوَ الْعَزِيزُ الْحَكِيمُ﴿014:004

اور ہم نے کوئی پیغمبر نہیں بھیجا مگر اپنی قوم کی زبان بولتا تھا تاکہ انہیں (احکام خدا) کھول کھول کر بتا دے۔ پھر خدا جسے چاہتا ہے گمراہ کرتا ہے اور جسے چاہتا ہے ہدایت دیتا ہے۔ اور وہ غالب اور حکمت والا ہے۔14-4

We sent not a messenger except (to teach) in the language of his (own) people, in order to make (things) clear to them.(14:4)

This tells us two things that a Prohet comes

1-amongst his own nation around him

2-and speaks their own language

Like Dear Prophet Muhammad salallaho alayhay wa sallam is Arab,and he came amongst the Arabs and speak Arabic and like all Prophets before.

 

Similarly when Bani Israeli Prophet Sayyidna Eisa Alayhay salam will come,in the beginning,his own nation will be around him,i.e the Muslim Bani Israel.

Important Note: Prophet Eisa alayhay salam will follow Islam and will not bring a new religion.Therefore he will not come among the Non Muslim Bani Israel i.e the Jews.

 

Ahadith also explains that why the Rule of the Quraish will be over.

The rule of Quraish is conditional to the obedience of the commandments of Allah as the following hadith tells us.

حدثنا يعقوب حدثنا أبي عن صالح قال ابن شهاب حدثني عبيد الله بن عبد الله بن عتبة أن عبد الله بن مسعود قال بينا نحن عند رسول الله صلى الله عليه وسلم في قريب من ثمانين رجلا من قريش ليس فيهم إلا قرشي لا والله ما رأيت صفحة وجوه رجال قط أحسن من وجوههم يومذ فذكروا النسا فتحدثوا فيهن فتحدث معهم حتى أحببت أن يسكت قال ثم أتيته فتشهد ثم قال أما بعد يا معشر قريش فإنكم أهل هذا الأمر ما لم تعصوا الله فإذا عصيتموه بعث إليكم من يلحاكم كما يلحى هذا القضيب لقضيب في يده ثم لحا قضيبه فإذا هو أبيض يصلد. مسند احمد. 

 حضرت ابن مسعود رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ ایک مرتبہ ہم اسی کے قریب قریشی افراد جن میں قریش کے علاوہ کسی قبیلے کا کوئی فرد نہ تھا، نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس بیٹھے ہوئے تھے، بخدا! میں نے مردوں کے چہروں، روشن رخ اس دن ان لوگوں سے زیادہ حسین کبھی نہیں دیکھا، دوران گفتگو عورتوں کا تذکرہ آیا اور لوگ خواتین کے متعلق گفتگو کرنے لگے، نبی صلی اللہ علیہ وسلم بھی ان کے ساتھ گفتگو میں شریک رہے، پھر میں نے چاہا کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم سکوت اختیار فرمائیں ، چنانچہ میں ان کے سامنے آگیا، نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے محسوس کیا اور تشہد (کلمہ شہادت پڑھنے) کے بعد فرمایا اما بعد! اے گروہ قریش! اس حکومت کے اہل تم لوگ ہی ہو بشرطیکہ اللہ کی نافرمانی نہ کرو، جب تم اللہ کی نافرمانی میں مبتلا ہو جاؤ گے تو اللہ تم پر ایک ایسے شخص کو مسلط کر دے گا جو تمہیں اس طرح چھیل دے گا جیسے اس ٹہپنی کو چھیل دیا جاتا ہے، اس وقت نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے دست مبارک میں ایک ٹہنی تھی، نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے چھیلا تو وہ اندر سے سفید،ٹھوس اور چکنی نکل آئی۔ مسند احمد:جلد دوم:حدیث نمبر 2409 

More Ahadith about the rule of Non Arabs

 

حدثنا أبو بكر الحنفي حدثنا عبد الحميد بن جعفر عن عمر بن الحكم الأنصاري عن أبي هريرة قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم لا يذهب الليل والنهار حتى يملك رجل من الموالي يقال له جهجاه- مسند احمد

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا دن اور رات کا چکر اس وقت تک ختم نہیں ہوگا جب تک موالی میں سے جہجاہ نامی ایک آدمی حکمران نہ بن جائے۔ مسند احمد:جلد چہارم:حدیث نمبر 1193

Narrated by Abu Huraira that Dear Prophet Muhammad(Salallaho alayhay wa sallam) said that,"The cycle of day and night will not be over untill a person from the Mawali(Non Arabs) called "JHEH-JAH" will become the ruler.(of the world).[17]

Vimportant Note :The word Mawali or mawālá (Arabic: موالي‎) is a term in Classical Arabic used to address non-Arab Muslims.[18]

Note: The detailed discussion about the translation of the word Mawali can be found in the end of this chapter

Afflictions will start from the Arab tribe of Banu Tamim

 

حدثنا عبد الله بن محمد حدثنا هشام أخبرنا معمر عن الزهري عن أبي سلمة عن أبي سعيد قال بينا النبي صلی الله عليه وسلم يقسم جائ عبد الله بن ذي الخويصرة التميمي فقال اعدل يا رسول الله فقال ويلک ومن يعدل إذا لم أعدل قال عمر بن الخطاب دعني أضرب عنقه قال دعه فإن له أصحابا يحقر أحدکم صلاته مع صلاته وصيامه مع صيامه يمرقون من الدين کما يمرق السهم من الرمية ينظر في قذذه فلا يوجد فيه شيئ ثم ينظر في نصله فلا يوجد فيه شيئ ثم ينظر في رصافه فلا يوجد فيه شيئ ثم ينظر في نضيه فلا يوجد فيه شيئ قد سبق الفرث والدم آيتهم رجل إحدی يديه أو قال ثدييه مثل ثدي المرأة أو قال مثل البضعة تدردر يخرجون علی حين فرقة من الناس قال أبو سعيد أشهد سمعت من النبي صلی الله عليه وسلم وأشهد أن عليا قتلهم وأنا معه جيئ بالرجل علی النعت الذي نعته النبي صلی الله عليه وسلم قال فنزلت فيه ومنهم من يلمزک في الصدقات. صحیح بخاری

عبداللہ بن محمد، ہشام، معمر، زہری، ابوسلمہ، ابوسعید سے روایت کرتے ہیں انہوں نے بیان کیا کہ ایک بار نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم مال غنیمت تقسیم کر رہے تھے۔ کہ عبداللہ بن ذی الخویصرہ تمیمی آیا اور کہا کہ اے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم عدل سے کام لیجئے، آپ نے فرمایا کہ تیری خرابی ہو جب میں عدل نہ کرو تو اور کون عدل کرے گا، حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ بن خطاب نے عرض کیا مجھے اجازت دیں کہ اس کی گردن اڑادوں آپ نے فرمایا کہ اس کو چھوڑ دو اس کے ایسے ساتھی ہیں کہ تم میں سے ایک شخص ان کی نماز کے مقابلہ میں اپنی نماز کو حقیر سمجھتا ہے، اور اپنے روزے کو ان کے روزے کے مقابلے میں حقیر سمجھتا ہے۔ وہ لوگ دین سے اس طرح نکل جائیں گے جس طرح تیر شکار سے نکل جاتا ہے، اس کے پروں میں دیکھا جائے تو کچھ معلوم نہیں ہوتا، پھر اس کے پھل میں دیکھا جائے تو معلوم نہیں ہوتا، حالانکہ وہ خون اور گوبر سے ہو کر گزرا ہے ان کی نشانی یہ ہوگی کہ ان میں ایک ایسا آدمی ہوگا جس کا ایک ہاتھ یا ایک چھاتی عورت کی ایک چھاتی کی طرح ہوگی، یا فرمایا کہ گوشت کے لوتھڑے کی طرح ہوگی، اور ہلتی ہوگی، لوگوں کے تفرقہ کے وقت نکلیں گے، ابوسعید کا بیان ہے، میں گواہی دیتا ہوں کہ حضرت علی نے لوگوں کو قتل کیا میں ان کے پاس تھا، اس وقت ایک شخص اسی صورت کا لایا گیا جو نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا تھا، ابوسعد کا بیان ہے کہ آیت، وَمِنْهُمْ مَّنْ يَّلْمِزُكَ فِي الصَّدَقٰتِ 9۔ التوبہ : 58) ، اسی شخص کے بارے میں نازل ہوئی۔ صحیح بخاری:جلد سوم:حدیث نمبر 1839    حدیث متواتر حدیث مرفوع   مکررات 24 متفق علیہ 17 

Narrated Abu Sa'id: While The Prophet(salallaho alayhay wa sallam)  was distributing (something, 'Abdullah bin Dhil Khawaisira At-Tamimi came and said, "Be just, O Allah's Apostle!" The Prophet(salallaho alayhay wa sallam)  said, "Woe to you ! Who would be just if I were not?" 'Umar bin Al-Khattab said, "Allow me to cut off his neck ! " The Prophet(salallaho alayhay wa sallam)  said, " Leave him, for he has companions, and if you compare your prayers with their prayers and your fasting with theirs, you will look down upon your prayers and fasting, in comparison to theirs. Yet they will go out of the religion as an arrow darts through the game's body in which case, if the Qudhadh of the arrow is examined, nothing will be found on it, and when its Nasl is examined, nothing will be found on it; and then its Nadiyi is examined, nothing will be found on it. The arrow has been too fast to be smeared by dung and blood. The sign by which these people will be recognized will be a man whose one hand (or breast) will be like the breast of a woman (or like a moving piece of flesh). These people will appear when there will be differences among the people (Muslims)." Abu Sa'id added: I testify that I heard this from The Prophet(salallaho alayhay wa sallam)  and also testify that 'Ali killed those people while I was with him. The man with the description given by The Prophet(salallaho alayhay wa sallam)  was brought to 'Ali. The following Verses were revealed in connection with that very person (i.e., 'Abdullah bin Dhil-Khawaisira At-Tarnimi): 'And among them are men who accuse you (O Muhammad) in the matter of (the distribution of) the alms.' (9.58).[19]

The affliction of Banu Tamim tribe will start from Najad

 

Following hadith is also about the same event mentioned before in hadith.and tells that  the afflictions will start from the off springs of Zul Khuwaisara of Banu Tamim and its location is Najad.

ہناد بن سری، ابواحوص، سعید بن مسروق، عبدالرحمن بن ابونعم، ابوسعید خدری سے روایت ہے کہ حضرت علی رضی اللہ عنہ اور میں نے حضرت رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو سونے کا ایک ٹکڑا بھیجا جو کہ مٹی میں شامل ہو چکا تھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اس کو چار آدمیوں کے درمیان تقسیم فرمایا وہ چار آدمی یہ ہیں (1) حضرت اقرع بن حابس (2) عینیہ بن بدر (3) علقمہ بن علاثہ عامری۔ اس کے بعد آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے قبیلہ بنی کلاب کے ایک شخص کو دیا پھر حضرت زید طان کو اور پھر قبیلہ بنی نبیان کے آدمی کو اس پر قریش ناراض ہوگئے اور ان کو غصہ آگیا اور کہنے لگے کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم لوگ نجد کے سرداران کو تو (صدقہ) دیتے ہیں اور ہم لوگوں کو نظر انداز کرتے ہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا میں نے اس واسطے ان کو دیا ہے کہ یہ لوگ تازہ تازہ مسلمان ہوئے ہیں اس لئے ان کے قلوب کو اسلام کی جانب متوجہ کرنے کے واسطے میں نے یہ کیا۔ اسی دوران ایک آدمی حاضر ہوا جس کی ڈاڑھی گھنی اور اس کے رخسار ابھرے ہوئے تھے اور اس کی آنکھیں اندر کو دھنسی ہوئی تھیں اور اس کی پیشانی بلند اور اس کا سر گھٹا ہوا تھا اور عرض کرنے لگا۔ اے محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تم خدا سے ڈرو۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا اگر میں بھی خداوند قدوس کی  نافرمانی کرنے لگ جاؤں تو وہ کون شخص ہے جو کہ خداوندقدوس کی فرماں برداری کرے گا اور کیا وہ میرے اوپر امین مقرر کرتا ہے اور تم لوگ محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو قابل بھروسہ خیال نہیں کرتے پھر وہ آدمی رخصت ہوگیا اور ایک شخص نے اس کو مار ڈالنے کی آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے اجازت مانگی۔ لوگوں کا خیال ہے کہ وہ حضرت خالد بن ولید تھے پھر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا اس شخص کی نسل سے اس طرح کے لوگ پیدا ہوں گے جو کہ قرآن کریم پڑھیں گے لیکن قرآن کریم ان کے حلق سے نیچے نہ اترے گا (یعنی قرآن کریم کا ان پر ادنی ٰ سا اثر نہ ہوگا) وہ لوگ دین اسلام سے اس طریقہ سے نکل جائیں گے جس طریقہ سے کہ تیر کمان سے نکل جاتا ہے۔ اگر ان کو میں نے پا لیا تو میں ان کو قوم عاد کی طرح سے قتل کر ڈالوں گا.سنن نسائی:جلد دوم:حدیث نمبر 489    حدیث متواتر حدیث مرفوع  مکررات 24

 It was narrated that Abu Saeed Al-Khudri said: “When he was in Yemen, ‘Ali sent a piece of gold that was still mixed with Sediment to the Messenger of Allah (Salallaho alayhay wa sallam) and the Messenger of Allah(Salallaho alayhay wa sallam)  distributed it among four People: Al-Aqra’ bin Habis Al-HanzalI, ‘Uyaynah bin Badr Al- Fazari, ‘Alqamah bin ‘Ulathah Al ‘Amiri, who was from Banu Kilab and Zaid At-Ta’i who was from Banu Nabhan. The Quraish” — he said one time “the chiefs of the Quraish” — “became angry and said: ‘You give to the chiefs of Najd and not to us?’ He said: ‘I only did that, so as to soften their hearts toward Islam.’ Then a man with a thick beard, prominent cheeks, sunken eyes, a high forehead, and a shaven head came and said: ‘Fear Allah, Muhammad!’ He said: ‘Who would obey Allah if I disobeyed Him? (Is it fair that) He has entrusted me with all the people of the Earth but you do not trust me?’ Then the man went away, and a man from among the people, whom they (the narrators) think was Khalid bin Al Walid, asked for permission to kill him. The Messenger of Allah (Salallaho alayhay wa sallam) said: ‘Among the offspring of this man will be some people who will recite the Qur’an but it will not go any further than their throats. They will kill the Muslims but leave the idol worshippers alone, and they will pass through Islam as an arrow passes through the body of the target. If I live to see them, I will kill them all, as the people of ‘Ad were killed.”.[20]

The off springs of this Arab tribe (Banu Tamim) will join Dajjal

 

The following hadith tells about the same incident and this hadith further tells that Dajjal will come among the offspring of Banu Tamim tribe from Najad.

أخبرنا محمد بن معمر البصري الحراني قال حدثنا أبو داود الطيالسي قال حدثنا حماد بن سلمة عن الأزرق بن قيس عن شريک بن شهاب قال کنت أتمنی أن ألقی رجلا من أصحاب النبي صلی الله عليه وسلم أسأله عن الخوارج فلقيت أبا برزة في يوم عيد في نفر من أصحابه فقلت له هل سمعت رسول الله صلی الله عليه وسلم يذکر الخوارج فقال نعم سمعت رسول الله صلی الله عليه وسلم بأذني ورأيته بعيني أتي رسول الله صلی الله عليه وسلم بمال فقسمه فأعطی من عن يمينه ومن عن شماله ولم يعط من وراه شيا فقام رجل من وراه فقال يا محمد ما عدلت في القسمة رجل أسود مطموم الشعر عليه ثوبان أبيضان فغضب رسول الله صلی الله عليه وسلم غضبا شديدا وقال والله لا تجدون بعدي رجلا هو أعدل مني ثم قال يخرج في آخر الزمان قوم کأن هذا منهم يقرون القرآن لا يجاوز تراقيهم يمرقون من الإسلام کما يمرق السهم من الرمية سيماهم التحليق لا يزالون يخرجون حتی يخرج آخرهم مع المسيح الدجال فإذا لقيتموهم فاقتلوهم هم شر الخلق والخليقة قال أبو عبد الرحمن رحمه الله شريک بن شهاب ليس بذلک المشهور. سنن نسائی:جلد سوم:حدیث نمبر 407 

محمد بن معمر بصری جرانی، ابوداؤد طیالسی، حماد بن سلمہ، الازرق بن قیس، شریک بن شہاب سے روایت ہے کہ مجھ کو تمنا تھی کہ میں حضرت رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے کسی صحابی سے ملاقات کروں۔ اتفاق سے میں نے عید کے دن حضرت ابوبرزہ اسلمی سے ملاقات کی اور ان کے چند احباب کے ساتھ ملاقات کی میں نے ان سے دریافت کیا کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے کچھ خوارج کے متعلق سنا ہے؟ انہوں نے فرمایا جی ہاں۔ میں نے رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے اپنے کان سے سنا ہے اور میں نے اپنی آنکھ سے دیکھا ہے کہ رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت اقدس میں کچھ مال آیا آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے وہ مال ان حضرات کو تقسیم فرما دیا جو کہ دائیں جانب اور بائیں جانب بیٹھے ہوئے تھے اور جو لوگ پیچھے کی طرف بیٹھے تھے ان کو کچھ عطاء نہیں فرمایا چنانچہ ان میں سے ایک شخص کھڑا ہوا اور عرض کیا اے محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے مال انصاف سے تقسیم نہیں فرمایا وہ ایک سانولے (یعنی گندمی) رنگ کا شخص تھا کہ جس کا سر منڈا ہوا تھا اور وہ سفید کپڑے پہنے ہوئے تھا یہ بات سن کر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم بہت سخت ناراض ہو گئے اور فرمایا خدا کی قسم! تم لوگ میرے بعد مجھ سے بڑھ کر کسی دوسرے کو (اس طریقہ سے) انصاف سے کام لیتے ہوئے نہیں دیکھو گے۔ پھر فرمایا آخر دور میں کچھ لوگ پیدا ہوں گے یہ آدمی بھی ان میں سے ہے کہ وہ لوگ قرآن کریم کی تلاوت کریں گے لیکن قرآن کریم ان کے حلق سے نیچے نہیں اترے گا وہ لوگ دائرہ اسلام سے اس طریقہ سے خارج ہوں گے کہ جس طریقہ سے تیر شکار سے فارغ ہو جاتا ہے ان کی نشانی یہ ہے کہ وہ لوگ سر منڈے ہوئے ہوں گے ہمیشہ نکلتے رہیں گے یہاں تک کہ ان کے پیچھے لوگ دجال ملعون کے ساتھ نکلیں گے۔ جس وقت ان لوگوں سے ملاقات کرو تو ان کو قتل کر ڈالو۔ وہ لوگ بدترین لوگ ہیں اور تمام مخلوقات سے برے انسان ہیں۔ سنن نسائی:جلد سوم:حدیث نمبر 407    حدیث متواتر حدیث مرفوع   مکررات 10

It was narrated that Sharik bin Shihab said: “I used to wish that I could meet a man among the Companions of The Prophet(salallaho alayhay wa sallam)  صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم and ask him about the Khawanj. Then I met Abu Barzah on the day of ‘Id, with a number of his companions. I said to him: ‘Did you hear the Messenger of Allah صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم mention the Khawarij?’ He said: ‘Yes. I heard the Messenger of Allah    صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم with my own cars, and saw him with my own eyes. Some wealth was brought to the Messenger of Allah صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم and he distributed it to those on his right and on his left, but he did not give anything to those who were behind him. Then a man stood behind him and said: “Muhammad! You have not been just in your division!” He was a man with black patchy (shaved) hair,t wearing two white garments. So Allah’s Messenger صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم, became very angry and said: “By Allah! You will not find a man after me who is more just than me.” Then he said: “A people will come at the end of time; as if he is one of them, reciting the Qur’an without it passing beyond their throats. They will go through Islam just as the arrow goes through the target. Their distinction will be shaving. They will not cease to appear until the last of them comes with Al-MasIh Ad Dajjál. So when you meet them, then kill them, they are the worst of created beings.”[21]

 

Another Hadith telling that off springs of Banu Tamim from Najad will join Dajjal

رسول الله صلى الله عليه وسلم بدنانير فقسمها وثم رجل مطموم الشعر آدم أو أسود بين عينيه أثر السجود عليه ثوبان أبيضان فجعل يأتيه من قبل يمينه ويتعرض له فلم يعطه شيا قال يا محمد ما عدلت اليوم في القسمة فغضب غضبا شديدا ثم قال والله لا تجدون بعدي أحدا أعدل عليكم مني ثلاث مرات ثم قال يخرج من قبل المشرق رجال كان هذا منهم هديهم هكذا يقرون القرآن لا يجاوز تراقيهم يمرقون من الدين كما يمرق السهم من الرمية ثم لا يرجعون فيه سيماهم التحليق لا يزالون يخرجون حتى يخرج آخرهم مع الدجال فإذا لقيتموهم فاقتلوهم هم شر الخلق والخليقة حدثنا عفان حدثنا حماد بن سلمة أخبرنا الأزرق بن قيس عن شريك بن شهاب قال كنت أتمنى أن ألقى رجلا من أصحاب محمد صلى الله عليه وسلم يحدثني عن الخوارج فلقيت أبا برزة في يوم عرفة في نفر من أصحابه فذكر الحديث. مسند احمد

           

شریک بن شہاب رحمۃ اللہ علیہ کہتے ہیں کہ میری یہ خواہش تھی کہ نبی علیہ السلام کے کسی صحابی سے ملاقات ہو جائے اور وہ مجھ سے خوارج کے متعلق حدیث بیان کریں، چنانچہ یوم عرفہ کے موقع پر حضرت ابوبرزہ رضی اللہ عنہ سے ان کے چند ساتھیوں کے ساتھ میری ملاقات ہو گئی، میں نے ان سے عرض کیا اے ابوبرزہ! خوارج کے حوالے سے آپ نے نبی علیہ السلام کو اگر کچھ فرماتے ہوئے سنا ہو تو وہ حدیث ہمیں بھی بتائیے، انہوں نے فرمایا میں تم سے وہ حدیث بیان کرتا ہوں جو میرے کانوں نے سنی اور میری آنکھوں نے دیکھی۔ ایک مرتبہ نبی علیہ السلام کے پاس کہیں سے کچھ دینار آئے ہوئے تھے، نبی علیہ السلام وہ تقسیم فرما رہے تھے، وہاں ایک سیاہ فام آدمی بھی تھا جس کے بال کٹے ہوئے تھے، اس نے دو سفید کپڑے پہن رکھے تھے، اور اس کی دونوں آنکھوں کے درمیان (پیشانی پر) سجدے کے نشانات تھے، وہ نبی علیہ السلام کے سامنے آیا، نبی علیہ السلام نے اسے کچھ نہیں دیا، دائیں جانب سے آیا لیکن نبی علیہ السلام نے کچھ نہیں دیا، بائیں جانب سے اور پیچھے سے آیا تب بھی کچھ نہیں دیا، یہ دیکھ کر وہ کہنے لگا بخدا اے محمد! صلی اللہ علیہ وسلم آج آپ جب سے تقسیم کر رہے ہیں، آپ نے انصاف نہیں کیا، اس پر نبی علیہ السلام کو شدید غصہ آیا، اور فرمایا بخدا! میرے بعد تم مجھ سے زیادہ عادل کسی کو نہ پاؤ گے، یہ جملہ تین مرتبہ دہرایا پھر فرمایا کہ مشرق کی طرف سے کچھ لوگ نکلیں گے، غالبا یہ بھی ان ہی میں سے ہے، اور ان کی شکل وصورت بھی ایسی ہی ہوگی، وہ لوگ قرآن تو پڑھتے ہوں گے لیکن وہ ان کے حلق سے نیچے نہیں اترے گا، وہ دین سے اس طرح نکل جائیں گے جیسے تیر شکار سے نکل جاتا ہے، وہ اس کی طرف لوٹ کر نہیں آئیں گے، یہ کہہ کر نبی علیہ السلام نے اپنے سینے پر ہاتھ رکھا، ۔ ان کی نشانی یہ ہے کہ وہ سرمنڈے ہوں گے ہمیشہ نکلتے ہی رہیں گے یہاں تک کہ ان کا آخری گروہ دجال کے ساتھ نکلے گا جب تم ان سے ملو تو انہیں قتل کردو۔ تین مرتبہ فرمایا. وہ تمام مخلوق سے بدترین ہیں. گذشتہ حدیث اس دوسری سند سے بھی مروی ہے. مسند احمد:جلد نہم:حدیث نمبر 44       حدیث متواتر حدیث مرفوع

It was narrated that Sharik bin Shihab said: “I used to wish that I could meet a man among the Companions of The Prophet(salallaho alayhay wa sallam صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم and ask him about the Khawanj. Then I met Abu Barzah on the day of ‘Id, with a number of his companions. I said to him: ‘Did you hear the Messenger of Allah صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم mention the Khawarij?’ He said: ‘Yes. I heard the Messenger of Allah صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم with my own cars, and saw him with my own eyes. Some wealth was brought to the Messenger of Allah صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم and he distributed it to those on his right and on his left, but he did not give anything to those who were behind him. Then a man stood behind him and said: “Muhammad! You have not been just in your division!” He was a baclk man with patchy (shaved) hair,t wearing two white garments and sign of prostration between forehead. So Allah’s Messenger صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم became very angry and said: “By Allah! You will not find a man after me who is more just than me.”He(Salallaho alayhay wa sallam) repeated these words three times. Then he said: “A people will come at the end of time from the east; as if he is one of them and their appearance will also be like this man.They will be reciting the Qur’an without it passing beyond their throats. They will go through Islam just as the arrow goes through the target. Their distinction will be shaving. They will not cease to appear until the last of them comes with Al-MasIh Ad Dajjál. So when you meet them, then kill them, they are the worst of created beings.” [22]

 

We see that in the above hadith the same person Zul Khuwaisara of Banu Tamim is mentioned in the same incident. So it proves that Dajjal will join the Banu Tamim from Najad.


 

More Ahadith telling that telling that these Arabs will join Dajjal

 

The following hadith is also related to Zul Khuwaisara since it also tells about the hyprocrites who reading Quran but it will not pass their thoughts

(حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ) قال وسمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول سيخرج أناس من أمتي من قبل المشرق يقرون القرآن لا يجاوز تراقيهم كلما خرج منهم قرن قطع كلما خرج منهم قرن قطع حتى عدها زيادة على عشرة مرات كلما خرج منهم قرن قطع حتى يخرج الدجال في بقيتهم. مسند احمد

حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا ہے کہ عنقریب میری امت میں سے مشرقی جانب سے کچھ ایسے لوگ نکلیں گے جو قرآن تو پڑھتے ہوں گے لیکن وہ ان کے حلق سے نیچے نہیں اترے گا جب بھی ان کی کوئی نسل نکلے گی اسے ختم کردیا جائے گا یہ جملہ دس مرتبہ دہرایا یہاں تک کہ ان کے آخری حصے میں دجال نکل آئے گا۔ مسند احمد:جلد سوم:حدیث نمبر 2361       

It was narrated by Abdullah bin Omar that I heard,the Messenger of Allah(Salallaho alayhay wa sallam)saying that: ‘Soon among my nation (Muslim Ummah) there will appear people from the East who will recite Qur’ân but it will not go any deeper than their collarbones or their throats.Whevener any of their offsrpings will appear,they will be eliminated.He ( Salallaho alayhay wa sallam) repeated this 10 times and then said until in the last of them ,Dajjal(Anti Christ) will appear[23]

.

ثم قال (حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ) حدث فإنا قد نهينا عن الحديث فقال ما كنت لأحدث وعندي رجل من أصحاب رسول الله صلى الله عليه وسلم ثم من قريش فقال عبد الله بن عمرو سمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول يخرج قوم من قبل المشرق يقرون القرآن لا يجاوز تراقيهم كلما قطع قرن نشأ قرن حتى يخرج في بقيتهم الدجال. مسند احمد

حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ نے پھر فرمایا تم حدیث بیان کرو کیونکہ ہمیں تو اس سے روک دیا گیاہے نوف نے کہا کہ صحابی رسول اللہ اور وہ بھی قریشی کی موجودگی میں حدیث بیان نہیں کر سکتا چنانچہ حضرت عبداللہ بن عمرو رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ میں نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا ہے کہ مشرق کی جانب سے ایک قوم نکلے گی یہ لوگ قرآن تو پڑھتے ہوں گے لیکن وہ ان کے حلق سے نیچے نہیں اترے گا جب بھی ان کی ایک نسل ختم ہو گی دوسری پیدا ہو جائے گی یہاں تک کہ ان کے آخر میں دجال نکل آئے گا۔ مسند احمد:جلد سوم:حدیث نمبر 2443          حدیث متواتر حدیث مرفوع   

It was narrated by Abdullah bin Omar that I heard,the Messenger of Allah(Salallaho alayhay wa sallam)saying that: ‘There will appear a nation from the East who will recite Qur’ân but it will not go any deeper than their collarbones or their throats.Whevener any of their offsrpings gets eliminated another will appear until in the last of them ,Dajjal(Anti Christ) will appear[24].

 

Please note that the same two characteristics are described about the aboive people i.e

1.They will read Quran but wont pass their throats

2.They will apparently worsip Allah much more than the Muslims

This exactly matches with the Ahadith of Zul Khuwaisara and therefore these ahadith also points towards the fitnah of Banu Tamim of Najad(The East).It proves that Dajjal will appear among them.

 

Further discussion about the Affliction from Najad is beyond the scope of this book but can be found at the other book called “The Army of Dajjal”.

 


 

The Horn of Satan from Arabia

The Horn of Satan from Najd consists of two Arab Tribes

 

The following hadith tells about the “Horn of Satan” from Najad.

حدثنا علي بن عبد الله حدثنا أزهر بن سعد عن ابن عون عن نافع عن ابن عمر قال ذکر النبي صلی الله عليه وسلم اللهم بارک لنا في شأمنا اللهم بارک لنا في يمننا قالوا يا رسول الله وفي نجدنا قال اللهم بارک لنا في شأمنا اللهم بارک لنا في يمننا قالوا يا رسول الله وفي نجدنا فأظنه قال في الثالثة هناک الزلازل والفتن وبها يطلع قرآن الشيطان. صحیح بخاری

علی بن عبداللہ ، ازہر بن سعد، ابن عون نافع، ابن عمر سے روایت کرتی ہیں کہ انہوں نے بیان کیا کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ یا اللہ ہمارے شام میں برکت عطا فرمایا اللہ ہمارے یمن میں برکت عطا فرما لوگوں نے کہا اور ہمارے نجد میں آپ نے فرمایا یا اللہ ہمارے شام میں برکت عطا فرمایا اللہ ہمارے یمن میں برکت عطا فرما لوگوں نے کہا یا رسول اللہ اور ہمارے نجد میں میرا خیال ہے کہ شاید آپ نے تیسری بار فرمایا کہ یہاں زلزلے ہوں گے اور فتنے ہوں اور وہیں سے شیطان کا سینگ طلوع ہوگا۔ صحیح بخاری:جلد سوم:حدیث نمبر 1986              حدیث مرفوع            مکررات 16 متفق علیہ14 

Narrated Ibn ‘Umar: The Prophet (s)said, “O Allah! Bestow Your blessings on our Sham! O Allah! Bestow Your blessings on our Yemen.” The People said, “And also on our NAJD.” He said, “O Allah! Bestow Your blessings on our Sham (north)! O Allah! Bestow Your blessings on our Yemen.” The people said, “O Allah’s Apostle! And also on our NAJD.” I think the third time the Prophet (s) said, “There (in NAJD) is the place of earthquakes and afflictions and from there comes out the side of the head of Satan[25]

Which 2 Arab Tribes make the Horns of Satan?

The following Hadith tells that the Horns of Satan means the cruel Arabs tribes of Mudar & Rabiah from the East of Madinah

حدثنا علي بن عبد الله حدثنا سفيان عن إسماعيل عن قيس عن أبي مسعود يبلغ به النبي صلی الله عليه وسلم قال من ها هنا جائت الفتن نحو المشرق والجفائ وغلظ القلوب في الفدادين أهل الوبر عند أصول أذناب الإبل والبقر في ربيعة ومضر

علی سفیان اسماعیل قیس حضرت ابومسعود رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے سنا کہ اسی طرف یعنی مشرق کی طرف سے فتنے اٹھیں گے ظلم اور سنگدلی شتر بانوں میں ہے یعنی اونی خیموں والوں کے ہاں اونٹ اور گائے کی دموں کے پاس یعنی ربیعہ اور مضر کے قبیلہ میں ہے۔ صحیح بخاری:جلد دوم:حدیث نمبر 725 

Narrated Abi Mas'ud:

The Prophet(salallaho alayhay wa sallam) said, "From this side from the east, afflictions will appear. Rudeness and lack of mercy are characteristics of the rural bedouins who are busy with their camels and cows (and pay no attention to religion). Such are the tribes of Rabi'a and Mudar."[26]

حدثني عبد الله بن محمد الجعفي حدثنا وهب بن جرير حدثنا شعبة عن إسماعيل بن أبي خالد عن قيس بن أبي حازم عن أبي مسعود أن النبي صلی الله عليه وسلم قال الإيمان ها هنا وأشار بيده إلی اليمن والجفائ وغلظ القلوب في الفدادين عند أصول أذناب الإبل من حيث يطلع قرنا الشيطان ربيعة ومضر۔ صحیح بخاری

  عبداللہ بن محمد جعفی وہب بن جریر شعبہ اسماعیل بن ابی خالد قیس بن ابی حازم حضرت ابومسعود رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہیں کہ انہوں نے بیان کیا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنے ہاتھ سے یمن کی جانب اشارہ کرتے ہوئے فرمایا کہ ایمان یہاں ہے درشتی اور سخت دلی ربیعہ اور مضر میں ہے جو اونٹوں کی دموں کے پاس آواز لگاتے ہیں جہاں سے سورج نکلتا ہے۔ صحیح بخاری:جلد دوم:حدیث نمبر 1541 

Narrated Abu Masud: The Prophet(salallaho alayhay wa sallam) beckoned with his hand towards Yemen and said, "Belief is there." The harshness and mercilessness are the qualities of the tribes of Rabia(the tribe of Al-e-Saud) and Mudar(The Banu Tamim) who are shouting near the tails of camels in the direction of the rising sun (i.e in the East).[27]

 

حدثنا أبو بکر بن أبي شيبة حدثنا أبو أسامة ح و حدثنا ابن نمير حدثنا أبي ح و حدثنا أبو کريب حدثنا ابن إدريس کلهم عن إسمعيل بن أبي خالد ح و حدثنا يحيی بن حبيب الحارثي واللفظ له حدثنا معتمر عن إسمعيل قال سمعت قيسا يروي عن أبي مسعود قال أشار النبي صلی الله عليه وسلم بيده نحو اليمن فقال ألا إن الإيمان ههنا وإن القسوة وغلظ القلوب في الفدادين عند أصول أذناب الإبل حيث يطلع قرنا الشيطان في ربيعة ومضر. صحیح مسلم:جلد اول:حدیث نمبر 183 

ابوبکر بن ابی شیبہ، ابواسامہ، ح، ابن نمیر، ح، ابوکریب، ابن ادریس، اسماعیل بن ابی خالد، ح، یحیی بن حبیب الحارثی، معتمر، اسماعیل، قیس، حضرت ابومسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے یمن کی طرف اپنے دست مبارک سے اشارہ کرتے ہوئے فرمایا ایمان تو یہاں ہے اور سخت مزاجی اور سنگ دلی ربیعہ و مضر اونٹ والوں میں ہے جو اونٹوں کی دموں کے پیچھے پیچھے ہانکتے چلے جاتے ہیں جہاں سے شیطان کے دو سینگ نکلیں گے یعنی قبیلہ ربیعہ اور مضر۔ صحیح مسلم

It is narrated on the authority of Ibn Mas'ud that the Apostle of Allah (may peace and blessings be upon him) pointed towards Yemen with his hand and said: Verily Iman is towards this side, and harshness and callousness of the hearts is found amongst the rude owners of the camels who drive them behind their tails (to the direction) where emerge the two horns of Satan, they are the tribes of Rabi'a and Mudar.[28]

The great Affliction of Mudar Tribe.

 

حدثنا أبو داود حدثنا هشام عن قتادة عن أبي الطفيل قال انطلقت أنا وعمرو بن صليع حتى أتينا حذيفة قال سمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول إن هذا الحي من مضر لا تدع لله في الأرض عبدا صالحا إلا فتنته وأهلكته حتى يدركها الله بجنود من عباده فيذلها حتى لا تمنع ذنب تلعة. مسند احمد

حضرت حذیفہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ میں نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا ہے قبیلہ مضر زمین پر اللہ کا کوئی نیک بندہ ایسا نہیں چھوڑے گا جسے وہ فتنے میں نہ ڈال دے اور اسے ہلاک نہ کر دے حتی کہ اللہ اس پر اپنا ایک لشکر مسلط کر دے گا جو اسے ذلیل کر دے گا اور اسے کسی ٹیلے کا دامن بھی نہ بچاسکے گا. مسند احمد:جلد نہم:حدیث نمبر 3301

It is narrated on the authority of Hadrat Huzafa that the Apostle of Allah (Salallaho alayhay wa sallam) said that the tribe of “Mudar”(i.e Banu Tamim) will not leave a pious person on Earth,that it will put in affliction and get him killed(or destroyed) until Allah will owerpower His army over them ,who will humiliate them and they will find no place to hide.[29]

Mudar will Kill Innocent Muslims

حدثنا خلف بن الوليد حدثنا عباد بن عباد عن مجالد بن سعيد عن أبي الوداك عن أبي سعيد الخدري قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم لتضربن مضر عباد الله حتى لا يعبد لله اسم وليضربنهم المؤمنون حتى لا يمنعوا ذنب تلعة. مسند احمد  حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا قبیلہ مضر کے لوگ اللہ کے بندوں کو مارتے رہیں گے تاکہ اللہ کی عبادت کرنے والا کوئی نام نہ رہے، اور مسلمان انہیں ماریں گے حتی کہاسے کسی ٹیلے کا دامن بھی نہ بچاسکے گا  - مسند احمد:جلد پنجم:حدیث نمبر 834

Hadrat Abu Saed Khadri narrated that the Apostle of Allah (Salallaho alayhay wa sallam) said that, “The tribe of “Mudar”(i.e Banu Tamim) will be killing (innocent) creatures(people) of Allah so that no one is left to worhsipp Allah on earth .And when the faithful(Muslims) will start killing them ,then they (Mudar Tribe) will find no place to hide.[30]


 

Who is Mudar and Rabia?

Identification

Rabia is the Ancestor tribe of Present Saudi Rulers

Mudar is the tribe of Muhammad ibn Abdul Wahhab

 (Note: The Banu Tamim of Najd were commonly known as the “Mudar” tribe at the time of Dear Prophet Muhammad(salallaho alayhay wa sallam).

The following family tree will clear these relations.

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

Figure 1 The Adnani Arab Tribes

Mudar is one of the forefathers of Quraish and Banu Tamim .Mudar had a son called Rabiah who is the father  Anizzah and Anizzah is the tribe of present Saudi Rulers.It means that the Saudi Rulers are from “Rabiah Tribe”[31]

Now the question is that if Mudar is the father of the Quraish(i.e the Tribe of Prophet salallaho alayhay wallam) then how can Dear Prophet Muhammad(Salallaho alayhay wa sallam) against his own family.

The reason is simple.

At the time of Dear Prophet Muhammad(salallaho alayhay wa sallam), The tribe of Banu Tamim was known as the Tribe of Mudar as the following hadith clearly tells us.

Mudar Tribe are the Banu Tamim

Mudar & Banu Tamim are same

حدثنا عفان قال حدثنا سلام أبو المنذر عن عاصم بن بهدلة عن أبي وال عن الحارث بن حسان قال مررت بعجوز بالربذة منقطع بها من بني تميم قال فقالت أين تريدون قال فقلت نريد رسول الله صلى الله عليه وسلم قالت فاحملوني معكم فإن لي إليه حاجة قال فقلت فدخلت المسجد فإذا هو غاص بالناس وإذا راية سودا تخفق فقلت ما شأن الناس اليوم قالوا هذا رسول الله صلى الله عليه وسلم يريد أن يبعث عمرو بن العاص وجها قال فقلت

يا رسول الله إن رأيت أن تجعل الدهنا حجازا بيننا وبين بني تميم

 فافعل فإنها كانت لنا مرة قال فاستوفزت العجوز وأخذتها الحمية

فقالت يا رسول الله أين تضطر مضرك

قلت يا رسول الله حملت هذه ولا أشعر أنها كانة لي خصما قال قلت أعوذ بالله أن أكون كما قال الأول قال رسول الله صلى الله عليه وسلم وما قال الأول قال على الخبير سقطت يقول سلام هذا أحمق يقول الرسول صلى الله عليه وسلم على الخبير سقطت قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم هيه يستطعمه الحديث قال إن عادا أرسلوا وافدهم قيلا فنزل على معاوية بن بكر شهرا يسقيه الخمر وتغنيه الجرادتان فانطلق حتى أتى على جبال مهرة فقال اللهم إني لم آت لأسير أفاديه ولا لمريض فأداويه فاسق عبدك ما كنت ساقيه واسق معاوية بن بكر شهرا يشكر له الخمر التي شربها عنده قال فمرت سحابات سود فنودي أن خذها رمادا رمددا لا تذر من عاد أحدا قال أبو وال فبلغني أن ما أرسل عليهم من الريح كقدر ما يجري في الخاتم. مسند احمد

حضرت حارث بن حسان سے مروی ہے کہ ایک مرتبہ میں مقام ربذہ میں ایک بوڑھی عورت کے پاس سے گذرا جو بنوتمیم سے کٹ چکی تھی اس نے پوچھا کہ تم کہاں جارہے ہو میں نے کہا کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف وہ کہنے لگی کہ مجھے بھی اپنے ساتھ لے چلو مجھے ان سے ایک کام ہے مدینہ پہنچ کر میں مسجد نبوی میں داخل ہوا تو نبی صلی اللہ علیہ وسلم لوگوں میں گھرے ہوئے تھے اور اک سیاہ جھنڈا لہرا رہا تھا میں نے لوگوں سے پوچھا کہ آج کوئی خاص بات ہے لوگوں نے بتایا کہ دراصل نبی صلی اللہ علیہ وسلم حضرت عمرو بن عاص کو ایک لشکر دے کر کسی طرف روانہ فرما رہے ہیں .میں نے آگے بڑھ کر عرض کیا

یا رسول اللہ اگر آپ مناسب سمجھیں تو ہمارے اور بنوتمیم کے درمیان حجاز کو بیان قرار دیدیں کیوکہ کبھی ایسا ہی تھا

 اس پر وہ بڑھیا کود کر سامنے آئی اور اس کی رگ حمیت نے جوش مارا اور کہنے لگی کہ

   یا رسول اللہ اپنے مضر کو آپ کہاں مجبور کریں گے

 میں نے عرض کیا یا رسول اللہ میں اس بڑھیا کو اٹھا کر لایا ہوں مجھے کیا خبر تھی کہ یہی مجھ سے جھگڑنے لگے گی۔ میں اللہ کی پناہ میں آتا ہوں اس بات سے کہ اس شخص کی طرح ہوجاؤں جیسے پہلوں نے کہا تھا نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے پوچھا پہلوں نے کیا کہا تھا میں نے عرض کیا کیا آپ نے ایک باخبر آدمی سے پوچھا لیکن نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تم بیان کرو دراصل نبی صلی اللہ علیہ وسلم پوری بات سننا چاہتے تھے۔میں نے عرض کیا قوم عاد نے اپنے ایک آدمی کو بطور وفد کے بھیجا وہ ایک مہینے تک معاویہ بن بکر کا مہمان بنا رہا وہ انہیں شراب پلاتا تھا اور دومنیوں سے گانے سنواتا تھا ایک دن وہ روانہ ہوا اور جبال مہرہ پر پہنچا اور کہنے لگا کہ اے اللہ میں اس لیے نہیں آیا کہ اس کا بدلہ چکاؤں نہ کسی بیمار کے لیے اس کا علاج کرسکوں لہذا تو اپنے بندوں کو وہ کچھ پلا جو تو پلا سکتا ہے اور معاویہ بن بکر کو ایک ماہ تک پلانے کا انتظام فرمادراصل یہ اس شراب کا شکریہ تھا جو و وہ اس کے یہاں ایک مہینہ تک پیتارہا تھا اسی اثناء میں سیاہ بادل آگئے اور کسی نے آواز دے کر کہا کہ یہ خوب بھرے ہوئے تھن والا بادل لے لو اور قوم عاد میں سے کسی ایک شخص کو بھی پیاسا نہ چھوڑو۔ مسند احمد:جلد ششم:حدیث نمبر 1792 

Further discussion regarding the affliction from Najad and Banu Tamim can be found in the book “Army of Dajjal Part-1”


 

More Ahadith about the Fitnah (affliction) among Arabs.

 

حدثني حرملة بن يحيی أخبرنا ابن وهب أخبرني يونس عن ابن شهاب أخبرني عروة بن الزبير أن زينب بنت أبي سلمة أخبرته أن أم حبيبة بنت أبي سفيان أخبرتها أن زينب بنت جحش زوج النبي صلی الله عليه وسلم قالت خرج رسول الله صلی الله عليه وسلم يوما فزعا محمرا وجهه يقول لا إله إلا الله ويل للعرب من شر قد اقترب فتح اليوم من ردم يأجوج ومأجوج مثل هذه وحلق بإصبعه الإبهام والتي تليها قالت فقلت يا رسول الله أنهلک وفينا الصالحون قال نعم إذا کثر الخبث

 حرملہ بن یحیی، ابن وہب، یونس، ابن شہاب، عروہ بن زبیر، زینب بنت ابوسلمہ، ام حبیبہ بنت ابی سفیان، حضرت زینب بنت جحش رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے روایت ہے کہ ایک دن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم گھبرائے اس حال میں نکلے کہ آپکا چہرہ سرخ تھا اور فرما رہے تھے لا الہ الا اللہ عرب کے لئے اس شر سے ہلاکت ہو جو قریب آچکا ہے آج یاجوج ماجوج کی آڑ اتنی کھل چکی ہے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے انگوٹھے اور اس کے ساتھ ملی ہوئی انگلی کا حلقہ بنا کر بتایا فرماتی ہیں میں نے عرض کیا اے اللہ کے رسول کہ ہم اپنے اندر موجود نیک لوگوں کے باوجود بھی ہلاک ہو جائیں گے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہاں جب فسق وفجور کی کثرت ہو جائے گی۔ صحیح مسلم:جلد سوم:حدیث نمبر 2737         حدیث متواتر حدیث مرفوع

Zainab bint Jahsh, the wife of Allah's Apostle (may peace be upon him), reported that one day Allah's Messenger (may peace be upon him) came out in a state of excitement with his face quite red. And he was saying: There is no god but Allah; there is a destruction in store for Arabia because of the turmoil which is near at hand as the barrier of Gog and Magog has been opened like it, and he (in order to explain it) made a ring with the help of his thumb and forefinger. I said: Allah's Messenger, would we be destroyed despite the fact that there would be pious people amongst us? He said: Yes, when the evil would predominate.[32]

 

Knowledge will decrease among Arabs

 

حدثنا حسن وهاشم قالا حدثنا شيبان عن عاصم عن يزيد بن قيس عن أبي هريرة عن النبي صلى الله عليه وسلم قال ويل للعرب من شر قد اقترب ينقص العلم ويكثر الهرج قلت يا رسول الله وما الهرج قال القتل. مسند احمد

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اہل عرب کے لئے ہلاکت ہے اس شر سے جو قریب آ لگا ہے علم کم ہوجائے گا اور ہرج کی کثرت ہوجائے گی میں نے پوچھا یا رسول اللہ! ہرج سے کیا مراد ہے؟ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا قتل۔ مسند احمد:جلد چہارم:حدیث نمبر 3684            حدیث مرفوع

Narrated by Abu Huraira that Dear Prophet Muhammad(Salallaho alayhay wa sallam) said that ,”Woe to the Arabs for the evil that has came near.Knowlege will  decrease and Haraj will increase.I asked “Ya Rasul Allah salallaho alayhay wa sallam,what does Haraj mean?.Dear Prophet Salallaho alayhay wa sallam said.Killing.[33]

The destruction of Arabs is near

 

حدثنا محمد بن عبيد قال حدثنا الأعمش عن أبي صالح عن أبي هريرة قال الأعمش لا أراه إلا قد رفعه قال ويل للعرب من أمر قد اقترب أفلح من كف يده ووافقه أبو معاوية عن أبي هريرة. مسند احمد

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مرفوعاً مروی ہے کہ عرب کی ہلاکت قریب آ لگی ہے اس شر سے جو قریب آ گیا ہے اس میں کامیاب وہی گا جو اپنا ہاتھ روک لے۔ مسند احمد:جلد چہارم:حدیث نمبر 2493    حدیث مرفوع.

Narrated by Abu Huraira that “The destruction of the Arabs is close due to an evil that is very near.Only those will succeed who will stop their hands(from fighting)[34]

Destruction of Arabs due to bad  deeds

حدثنا يحيی بن بکير حدثنا الليث عن عقيل عن ابن شهاب عن عروة بن الزبير أن زينب بنت أبي سلمة حدثته عن أم حبيبة بنت أبي سفيان عن زينب بنت جحش رضي الله عنهن أن النبي صلی الله عليه وسلم دخل عليها فزعا يقول لا إله إلا الله ويل للعرب من شر قد اقترب فتح اليوم من ردم يأجوج ومأجوج مثل هذه وحلق بإصبعه الإبهام والتي تليها قالت زينب بنت جحش فقلت يا رسول الله أنهلک وفينا الصالحون قال نعم إذا کثر الخبث. صحیح بخاری

یحیی بن بکیر لیث عقیل ابن شہاب عروہ بن زبیر زینب بنت ابوسلمہ حضرت ام حبیبہ بنت ابوسفیان حضرت زینب بنت جحش رضی اللہ عنہن سے روایت کرتی ہے کہ رسالت مآب صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ایک دن ان کے پاس گھبرائے ہوئے تشریف لائے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم فرما رہے تھے کہ لا الہ الا اللہ عرب کی خرابی ہو اس شر سے جو قریب آگیا آپ نے انگوٹھے اور شہادت والی انگلی کا حلقہ بنا کر اس کی طرف اشارہ کرتے ہوئے فرمایا کہ آج اس کے برابر یاجوج ماجوج نے دیوار میں سوراخ کر لیا ہے حضرت زینب نے عرض کیا یا رسول اللہ کیا ہم ہلاک ہو جائیں گے حالانکہ ہم میں نیک لوگ بھی ہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہاں! اس وقت جبکہ فسق وفجور کی زیادتی ہو جائے گی۔ صحیح بخاری:جلد دوم:حدیث نمبر 581    حدیث متواتر حدیث مرفوع متفق علیہ 7 

Narrated Zainab bint Jahsh:

That the Prophet(Salallaho alayhay wa sallam) once came to her in a state of fear and said, "None has the right to be worshipped but Allah. Woe unto the Arabs from a “Shar”(affliction) that has come near. An opening has been made in the wall of Gog and Magog like this," making a circle with his thumb and index finger. Zainab bint Jahsh said, "O Allah's Apostle! Shall we be destroyed even though there are pious persons among us?" He said, "Yes, If sin and evil deeds increase.[35]

Deen(Islam) will be sold for wordly benefits

 

حدثنا يحيى بن إسحاق حدثنا ابن لهيعة عن أبي يونس عن أبي هريرة قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم ويل للعرب من شر قد اقترب فتنا كقطع الليل المظلم يصبح الرجل مؤمنا ويمسي كافرا يبيع قوم دينهم بعرض من الدنيا قليل المتمسك يومذ بدينه كالقابض على الجمر أو قال على الشوك قال حسن في حديثه خبط الشوكة. مسند احمد

 حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اہل عرب کے لئے ان فتنوں سے ہلاکت ہے جو قریب آگئے ایسے فتنے جو تاریک رات کے حصوں کی طرح ہوں گے اس زمانے میں ایک آدمی صبح کو مومن اور شام کو کافر ہوگا یا شام کو مومن اور صبح کو کافر ہوگا اور اپنے دین کو دنیا کے تھوڑے سے ساز و سامان کے عوض فروخت کردیا جائے گا۔ اور اس زمانے میں اپنے دین پر ثابت قدم رہنے والا مٹھی میں انگارے لینے والے شخص کی طرح ہوگا۔ مسند احمد:جلد چہارم:حدیث نمبر 1890    حدیث مرفوع

Abu Hurairah said, The Prophet(salallaho alayhay wa sallam) said, Woe to the Arabs from the great evil which is nearly approaching them: it will be like patches of dark night. A man will wake up as a believer, and be a kafir (unbeliever) by nightfall.People will sell their religion for a small amount of worldly goods. The one who clings to his religion on that day will be as one who is grasping an ember - or thorns.[36]

The Destruction of Muslims by some of the Arabs of Quraish Tribe

 

المکي حدثنا عمرو بن يحيی بن سعيد الأموي عن جده قال کنت مع مروان وأبي هريرة فسمعت أبا هريرة يقول سمعت الصادق المصدوق يقول هلاک أمتي علی يدي غلمة من قريش فقال مروان غلمة قال أبو هريرة إن شئت أن أسميهم بني فلان وبني فلان.. صحیح بخاری

احمد بن محمد المکی عمرو بن یحیی بن سعید الاموی ان کے دادا نے حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت کیا کہ میں نے صادق و مصدوق حضرت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا کہ میری امت کی ہلاکت قریش کے چند نوجوانوں کے ہاتھ ہے مروان نے کہا چند نوجوانوں کے ہاتھ میں، حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے کہا اگر تو چاہے تو میں ان کے نام بھی تجھ کو بتلا دوں۔ صحیح بخاری:جلد دوم:حدیث نمبر 826            حدیث مرفوع             مکررات 5 متفق علیہ 5 

Narrated Said Al-Umawi: I was with Marwan and Abu Huraira and heard Abu Huraira saying, "I heard the trustworthy, truly inspired one (i.e. the Prophet Salallaho alayhay wa sallam ) saying, 'The destruction of my followers will be brought about by the hands of some youngsters from Quraish." Marwan asked, "Youngsters?" Abu Huraira said, "If you wish, I would name them: They are the children of so-and-so and the children of so-and-so."[37]

 

END OF CHAPTER 10

Continued discussion from Page Number

What does the word Mawali means?

 Mawali or mawālá (Arabic: موالي‎) is a term in Classical Arabic used to address non-Arab Muslims.Its a pity that the recent books published by Saudi government fundings,the meaning of the word “Mawali” is deliberaetely changed to “new Muslim converts” instead of the “Non Arabs”.We shall study the true meaning of “Mawali”  using different references

 Reference 1: 

In the book "Nature, man and God in medieval Islam" by Mahmud ibn 'Abd al-Rahman Al-Isfahani, Edwin Elliott Calverley writes. 

"Quoting form the article,Mawla by A.J Wensinck and Patricia Crone, "The meaning of [mawla],is a person linked by [wala]("proximity") to another person,similarly known as [mawla].The relation maybe one of equality or of inequality. The root meaning of [wali] thus includes proximity,and by derivation,power and protection.In the Quran and Tradition(Hadith),there are two senses of the term [mawla=wali],referring to the superior of two parties in a relationship: as tutor-trustee-helper,and as Lord.We may supply synonyms for the "trustee" that would include warden,executer,guardian.etc.,and for "helper" that would include kinsman,friend,ally,etc.In the relationship of inequality,the lesser party would be a client of some sort to the superior party.Quoting the same article further,

"Since the non-Arabs could only enter this society as client,[mawla] came to be synomous with 'non-Arab Muslims".

 Reference 2 :

The Princeton University website describes Mawali as ; the non-Arab converts to Islam.

Originally the term mawla (singular of mawali) referred to a party with whom one had an egalitarian relationship, such as a relative, ally, or friend, but the term eventually came to designate a party with whom one had an unequal relationship, such as master, manumitter, and patron, and slave, freedman, and client. Under the First Four Caliphs and the Umayyads, the influx of non-Arab converts to Islam created a new difficulty: how were they to be incorporated into tribal Arab society? The solution was the contract of wala', through which the non-Arab Muslim acquired an Arab patron. In principle, the mawali were to enjoy the same privliges as Arab Muslims.The mawali rapidly rose to prominence in Muslim society in administration, military, and scholarship.[3]

Bibliography

o    Conversion and Poll-Tax in Early Islam, D.C. Dennett, Cambridge 1950

o    The Encyclopedia of Islam, second edition

o    Slaves on Horses, P. Crone, Cambridge 1980

Reference 3 :

In the book “Orphans of Islam: family, abandonment, and secret adoption in Morocco” By Jamila Bargach its written :

“The meaning of Mawali has historically shifted.In the pre-Islamic period,the Mawali were the clients of Arab tribe, while with Islam it came to denote simply Non-Arab Muslims who allied themselves with the Muslim community as clients.”

 

Reference 4 :

In the book “Islam in history: ideas, people, and events in the Middle East” By Bernard Lewis its written:

“The mawali (singular) mawla  were those Muslims who were not full members by birth of an Arab tribe.The greater part of these were the Non Arabs converts to Islam” 

Reference 5 :

In the book “Discovering Islam: making sense of Muslim history and society”  By Akbar S. Ahmed its written that :

"A mawla was a Muslim who was not a member of an Arab tribe by descent,a Persian or an Eygyptian for example.The term did not include non-Muslims,dhimmis.”

Summary of the Meaning of Mawali

In short the word Mawali means the NON ARABS only in the given hadith.


 



[1] : Saheeh Muslim Book Hadith 2896,Page 1904,Volume 3.

[2] Masnad Ahmad,Vol 9,Hadith 4444

[3] Sunan Ibn Majah Hadith 971,Page 778 volume 3.

[4] Sunan Abu Daud,Vol 3,Hadith 897

[5] Tabrani (Majam-al-kabeer),Book 187,Hadith number 7367

[6] Saheeh Bokhari

[7] Masnad Ahmad,Vol 2,Hadith 1035.

[8] Mustadrak Hakim,Hadith 8385 Kitab-al-fitan.Also in Masnaf Ibn Sheeba Kitab-al-fitan

[9] Ibn Majah & also Hakim Mustadrak.

[10] Saheeh Muslim,Vol 3,Hadith 2740.

[11] Masnad Ahmad Hadith 6143

[12] Masnad Ahmad, Hadith 6581

[13] Mustadrak Hakim,Chapter of Fitan wa Malahim,Hadith 8329

[14] Ibn Khallikan's biographical dictionary by Ibn Khallikan Page-294.

[15] Sunan Ibn Majah,Hadith 958

[16] Jamia Trimdi,Vol 2,Hadith 117,Also Masnad Ahmad 10944,

[17] Masnad Ahmad,Vol 4,Hadith 1193.

[19] Saheeh Bokhari Vol 3,Hadith 1839

[20] Sunan Nisai,Vol 2,Hadith 489

[21] Sunan Nisai,Vol 3,Hadith 407,Hadith Matwatar Marfu

[22] Masnad Ahmad,Vol 9,Hadith 44

[23] Masnad Ahmad,Vol 3,Hadith 2361.

[24] Masnad Ahmad,Vol 3,Hadith 2361.

[25] .” Sahi Bukhari (Book #88, Hadith #214)

[26] Sahih Bokhari,Vol2,Hadith 725

[27] Sahih Bokhari,Vol 2,Hadith 1541

[28] Sahih Muslim,Vol1,Hadith 183

[29] Masnad Ahmad,Vol 9,Hadith 3301)

[30] Masnad Ahmad,Vol 5,Hadith 834

[32] Sahih Muslim,Vol 3,Hadith 2737

[33] Masnad Ahmad,Vol 4,Hadith number 3684.

[34] Masnad Ahmad Vol 4,Hadith 2493.

[35] Saheeh Bokhari,Vol 2,Hadith No 581.

[36] Masnad Ahmad Vol 4,Hadith No 1890.

[37] Saheeh Bokhari,Vol 2,Hadith No 1890.


Comments