sign1

a

 

Prophet Sayyidna Eisa (Alayhay salam)’s and Imam Mahdi’s will come from the East (Like some of the  Dajjal followers  but this East is different from that as it will become clear when reach the Sign-6)

حدثنا محمد بن يحيى وأحمد بن يوسف، قالا: حدثنا عبد الرزاق عن سفيان الثوري، عن خالد الحذاء، عن أبي قلابة، عن أبي أسماء الرحبي، عن ثوبان؛ قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم:((يقتيل عند كنزكم ثلاثة كلهم ابن خليفة. ثم لا يصير إلى واحد منهم. ثم نطلع الرايات السود من قبل المشرق. فيقتلونكم قتلا لم يقتله قوم)).ثم ذكر شيئا لا أحفظه. فقال ((فإذا رأيتموه فبايعوه ولو حبوا على الثلج. فإنه خليفة الله، المهدي)).في الزوائد: هذا إسناده صحيح. رجاله ثقات. ورواه الحاكم في المستدرك، وقال. صحيح على شرط الشيخين

ترجمۃ۔ حضرت ثوبان سے روایت ھے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا کہ تمھارے ایک خزانے کی خاطر تین شخص قتال کریں گے( اورمارے جائیں گے) تینوں آدمی حکمران کے بیٹے ھوں گے لیکن وہ خزانہ ان میں سے کسی کو نہیں ملے گا پھر مشرق کی جانب سے کالے جھنڈے نمودار ھوں گے وہ تم کو ایسا قتل کریں گے کہ یس سے قبل کسی نے ایسا قتل نہیں کیا ھوگا۔اس کے بعد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم نے کچھ باتیں ذکر فرمائں جو مجھے یاد نہیں پھر فرمایا ک جب تم ان کو دیکھو تو ان سے بیعت کر لو چاھے تمھیں گھٹنوں کے بل برف کے اوپر گھسٹ کر جانا پڑے کیونکہ وہ اللہ کے خلیفہ مہدی ھوں گے (۔ حاکم مستد ر ک)

Thawban (R.A) reported that Dear Propet(salallaho alayhay wa sallam) said, “ Three people will fight for your treasure (and get killed).All three of them will be sons of a Ruler but none of them will get the treasure. Then Black Flags will appear from the East & will kill you as no one (in History) has killed you before. Then Dear Prophet(salallaho alayhay wa alay hesallam) said soemthing that I didn’t remember.Then again Dear Prophet(salallaho alayhay wa alay he sallam) said if you see him then give him your allegiance, even if you have to crawl over ice, because he is the Khalifah of Allah, the Mahdi(The hadith is Saheeh(Most Authentic) according to the standards of Saheeh Bokhari & Saheeh Muslim).[1]

 

 

Also the following hadith tells about the Army of the East coming to help Mahdi

Attack of Muslims on the Army of the East of Imam Mahdi

The following authentic hadith tells that the Arabs Muslims of Makkah will be the first to attack on the Army of the East of Imam Mahdi in the Holy Mosque  (Baitul Haram),

حدثنا محمد بن يحيى وأحمد بن يوسف، قالا: حدثنا عبد الرزاق عن سفيان الثوري، عن خالد الحذاء، عن أبي قلابة، عن أبي أسماء الرحبي، عن ثوبان؛ قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم:((يقتيل عند كنزكم ثلاثة كلهم ابن خليفة. ثم لا يصير إلى واحد منهم. ثم نطلع الرايات السود من قبل المشرق. فيقتلونكم قتلا لم يقتله قوم)).ثم ذكر شيئا لا أحفظه. فقال ((فإذا رأيتموه فبايعوه ولو حبوا على الثلج. فإنه خليفة الله، المهدي)).في الزوائد: هذا إسناده صحيح. رجاله ثقات. ورواه الحاكم في المستدرك، وقال. صحيح على شرط الشيخين

ترجمۃ۔ حضرت ثوبان سے روایت ھے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا کہ تمھارے ایک خزانے کی خاطر تین شخص قتال کریں گے( اورمارے جائیں گے) تینوں آدمی حکمران کے بیٹے ھوں گے لیکن وہ خزانہ ان میں سے کسی کو نہیں ملے گا پھر مشرق کی جانب سے کالے جھنڈے نمودار ھوں گے وہ تم کو ایسا قتل کریں گے کہ یس سے قبل کسی نے ایسا قتل نہیں کیا ھوگا۔اس کے بعد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم نے کچھ باتیں ذکر فرمائں جو مجھے یاد نہیں پھر فرمایا ک جب تم ان کو دیکھو تو ان سے بیعت کر لو چاھے تمھیں گھٹنوں کے بل برف کے اوپر گھسٹ کر جانا پڑے کیونکہ وہ اللہ کے خلیفہ مہدی ھوں گے (۔ حاکم مستد ر ک)

Thawban (R.A) reported that Dear Propet(salallaho alayhay wa sallam) said, “ Three people will fight for your treasure (and get killed).All three of them will be sons of a Ruler but none of them will get the treasure. Then Black Flags will appear from the East & will kill you as no one (in History) has killed you before. Then Dear Prophet(salallaho alayhay wa alay hesallam) said soemthing that I didn’t remember.Then again Dear Prophet(salallaho alayhay wa alay he sallam) said if you see him then give him your allegiance, even if you have to crawl over ice, because he is the Khalifah of Allah, the Mahdi(The hadith is Saheeh(Most Authentic) according to the standards of Saheeh Bokhari & Saheeh Muslim).[2]

 

The Rulers of Arabian peninsula will not help the Army of Mahdi from the East and therefore Army of Mahdi will fight with them and there the Largest Killing of Arabs in History will take place by the Hands of Imam Mahdi's Army

Why the people of that area will be attacked by the Army of Mahdi?  

This will happened because the custodians of the Holy Mosques will attack Imam Mahdi first and stop them from entering the holy Mosques. Also mentioned in Quran

وَمَنْ اَظْلَمُ مِمَّنْ مَّنَعَ مَسٰجِدَ اللّٰهِ اَنْ يُّذْكَرَ فِيْهَا اسْمُه وَسَعٰى فِيْ خَرَابِهَا ۭاُولٰۗىِٕكَ مَا كَانَ لَھُمْ اَنْ يَّدْخُلُوْھَآ اِلَّا خَاۗىِٕفِيْنَ ڛ لَھُمْ فِي الدُّنْيَا خِزْيٌ وَّلَھُمْ فِي الْاٰخِرَةِ عَذَابٌ عَظِيْمٌ -114-2

اوراس سے بڑھ کر کون ظالم ہوگا جس نے الله کی مسجدوں میں اس کا نام لینے کی ممانعت کردی اور ان کے ویران کرنے کی کوشش کی ایسے لوگوں کا حق نہیں ہے کہ ان میں داخل ہوں مگر ڈرتے ہوئے ان کے لیے دنیا میں بھی ذلت ہے اوران کے لیے آخرت میں بہت بڑا عذاب ہے114-2

And who is more unjust than he who forbids that in places for the worship of Allah His name should be celebrated? Whose zeal is (in fact) to ruin them? It was not fitting that such should themselves enter them except in fear. For them there is nothing but disgrace in this world and in the world to come, an exceeding torment. (2:114)

Consequence of Bloodshed in Kaabah by attack on Mahdi

This is told in the following authentic hadith and is also related to the previous hadith

حدثنا يزيد بن هارون قال أخبرنا ابن أبي ذئب عن سعيد بن سمعان قال : سمعت أبا هريرة يخبر أبا قتادة عن النبي ( ص ) قال : ( يبايع لرجل بين الركن والمقام ، ولن يستحل البيت إلا أهله ، فإذا استحلوه فلا تسأل عن هلكة العرب ثم تأتي الحبشة فيخربون خرابا لا يعمر بعده ابدا وهم الذين يستخرجون كنزه )- هَذَا حَدِيثٌ صَحِيحٌ عَلَى شَرْطِ الشَّيْخَيْنِ ، وَلَمْ يُخْرِجَاهُ

 ۔ مستدرک حاکم (کتاب الفتن )حدیث ۸۳۹۵،مصنف ابن شیبہ (کتاب الفتن )حدیث136 

حضرت ابوقتادہ سے مروی ھے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآ لہ وآلہ وسلم نے فرمایا : ایک شخص سے حجر اسود اور مقام ابر ا ھیم کے درمیان بیعت کی جاے گی اور کعبہ کی عزت و حرمت کو اس کے اھل ہی پامال کریں گے اور جب اسکی حرمت پامال کر دی جاے گی تو پھر عرب کی تباھی کا حال مت پوچھو (یعنی ان پر اس قدر تباہی آے گی جو بیان سے باہر ھے) پھر حبشی چڑھای کر دیں گے اور مکہ مکرمہ کو بلکل ویران کر دیں گے اور یہی کعبہ کے (مدفون) خزانہ کو نکالیں گے ۔ مستدرک حاکم (کتاب الفتن )حدیث 8395 ، مصنف ابن شیبہ (کتاب الفتن )حدیث136 

Narrated by Hazrat Abu Huraira(radi Allah Anho) from Hazrat Abu Qatada:Dear Prophet (Salallaho alayahy wa sallam) said: People will be given allegiance (Beyat) to person (i.e Mahdi) between the Ruken(Hajr-e-Aswad) and Mukam(Mukam-e-Ebraheem) and  no one else but the same people who are related to that place(citizens of Makkah) will destroy the respect of Kabah(as they will attack Mahdi in Kabah where fighting is forbidden) and when they will declare it Halal then do not ask about the killing of the ARABS(there will be a mass killing of arabs).Then Ethopians(Africans) will come and they will desolate it in such a way that it would never be a habitat and these will be the people who will take out its treasure(This hadith is Saheeh(Most Authentic) according to the conditions of Saheeh Bokhari & Saheeh Muslim).[3]

 

Also check the following hadith with almost the same meaning (Note the Hadith written Below is Daif(not authentic) but I have mentioned it since it resembles the above Authentic Hadith

حدثنا عثمان بن أبي شيبة. حدثنا معاوية بن هشام. حدثنا علي بن صالح عن يزيد ابن أبي زياد عن إبراهيم، عن علقمة، عن عبد الله؛ قال: بينما نحن عند رسول الله صلى الله عليه وسلم إذ أقبل فتية من بني هاشم. فلما رآهم النبي صلى الله عليه وسلم، اغرورقت عيناه وتغير لونه. قال، فقلت: ما نزال نرى في وجهك شيئا نكرهه. فقال:
(( إنا أهل بيت اختار الله لنا الآخرة على الدنيا. وإن أهل بيتي سيلقون بعدي بلاء وتشريدا وتطريدا. حتى يأتى قوم من قبل المشرق معهم رايأت سود. فيسألون الخير، فلا يعطونه. فيقاتلون فينصرون. فيعطون ما سألوا. فلا يقبلونه. حتى يدفعوها إلى رجل من أهل بيتي فيملؤها قسطا. كما ملؤوها جورا. فمن أدرك ذلك منكم، فليأتهم ولو حبوا على الثلج)).
کتاب۔ سنن ابن ماجہ فی کتاب الفتن حدیث4082

حضرت عبدللہ بن مسعود فرماتے ہیں کہ ایک مرتبہ ہم رسول پاک صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی خدمت میں حاضر تھے کہ بنو ہاشم کے چند نوجوان آے رسول پاک صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے ان کو دیکھا تو آپ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی آنکھین بھر آئیں اور رنگ مبارک متغیر ہو گیا ۔میں نے عرض کیا ہم مسلسل آ پ صلی اللہ علیہ وسلم کے چہرہ میں ایسی کیفیت دیکھ دہے ہیں جو ہمیں پسند نہیں (یعنی ہمارا دل دکھتا ہے)، فرمایا ہم اس گھرانے کے افراد ہیں جس کیلئے اللہ تعالی نے دنیا کی بجا ئے آخرت کو پسند فرما لیا ہے اور میرے اہل بیت میرے بعد عنقریب ہی آزما ئش اور سخت جلا وطنی کا سامنا کریں گے۔ یہاں تک کہ مشرق کی جانب سے ایک قوم کالے جھنڈوں کے ساتھ آے گی اور وہ لوگ (ضرورت کی وجہ سے) خیر کا مطالبہ کریں گے ، لوگ ان کو خیر نہیں گے تو وہ لوگ ان سے لڑیں گے اور ان پر غالب آجایں گے ، اب لوگ ان کے مطالبہ کو پورا کرنا چاہیں گے تو وہ اس کو قبول نہیں کریں گے حتی کہ وہ اس (خیر) کو میرے اہل بیت میں سے ایک شخص کے حوالے کر دیں گے جو زمین کو اسی طرح عدل و انصاف سے بھر دے گا جیسے لوگوں نے اس سے پہلے ظلم و ستم سے بھرا ہوگا ، سو تم میں سے جو اس کو پاے تو اس کے پاس آجاے اگرچہ برف پر گھسٹ کر آنا پڑے ۔حوالہ ۔کتاب۔سنن ابن ماجہ ۔حدیث 963 کتاب الفتن جلد سوم

Narrated "Abd Allah said, Whilst we were with the Prophet, some young men from Banu Hashim approached us. When the Prophet saw them, his eyes filled with tears and the colour of his face changed. I said, We can see something has changed in your face, and it upsets us. The Prophet said, We are the people of a Household for whom Allah has chosen the Hereafter rather than this world. The people of my Household (Ahl al-Bayt) will suffer a great deal after my death, and will be persecuted until a people carrying black banners will come out of the east. They will instruct the people to do good, but the people will refuse; they will fight until they are victorious, and the people do as they asked, but they will not accept it from them until they hand over power to a man from my household. Then the earth will be filled with fairness, just as it had been filled with injustice. If any of you live to see this, you should go to him even if you have to crawl across ice."[4]

 

Also the following Hadith written Below is Daif(not authentic) but I have mentioned it since it resembles the Authentic Hadith about army of Mahdi from the East

 

حدثنا حرملة. بن يحيى المصري، وإبراهيم بن سعيد الجوهري، قالا: حدثنا أبو صالح عبد الغفار بن داود الحراني. حدثنا ابن لهيعضة عن أبي زرعة عمرو بن جابر الخضرمي، عن عبد الله بن الحرث بن جزء الزبيدي؛ قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم:((يخرج ناس مم المشرق. فيوطئون للمهدي)) يعني سلطانه في الزوائد: في إسناده عمرو بن جابر الحضرمي وعبد الله بن لهيعة(رواہ ابن ماجہ)

ترجمۃ۔ عن عبد اللہ بن حارث بن جز الزبیدی سے روایت ھے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا کہ مشرق سے کچھ لوگ نکلیں گے جو مھدی کے لۓ خلافت کو آ سان کر دیں گے (رواہ ابن ماجہ)

Adbullah bin Haris (R.A) reported that Dear Propet(salallaho alayhay wa sallam) said, Some people will come out from the EAST who will make Caliphate(Islamic rule) easy for Imam Mahdi.[5]

 

Dajjal will also Appear from the East

 

(حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ) قال وسمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول سيخرج أناس من أمتي من قبل المشرق يقرون القرآن لا يجاوز تراقيهم كلما خرج منهم قرن قطع كلما خرج منهم قرن قطع حتى عدها زيادة على عشرة مرات كلما خرج منهم قرن قطع حتى يخرج الدجال في بقيتهم. مسند احمد

حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا ہے کہ عنقریب میری امت میں سے مشرقی جانب سے کچھ ایسے لوگ نکلیں گے جو قرآن تو پڑھتے ہوں گے لیکن وہ ان کے حلق سے نیچے نہیں اترے گا جب بھی ان کی کوئی نسل نکلے گی اسے ختم کردیا جائے گا یہ جملہ دس مرتبہ دہرایا یہاں تک کہ ان کے آخری حصے میں دجال نکل آئے گا۔ مسند احمد:جلد سوم:حدیث نمبر 2361         

It was narrated by Abdullah bin Omar that I heard,the Messenger of Allah(Salallaho alayhay wa sallam)saying that: ‘Soon among my nation (Muslim Ummah) there will appear people from the East who will recite Qur’ân but it will not go any deeper than their collarbones or their throats.Whevener any of their offsrpings will appear,they will be eliminated.He ( Salallaho alayhay wa sallam) repeated this 10 times and then said until in the last of them ,Dajjal(Anti Christ) will appear[6]

Proof that The East of affliction is from the Najad

Following hadith is related to the above hadith as it tells about the same hypocrites who will be reading Quran but Quran will not pass throught their throats.It is further explained in this hadith that these people will be among the tribes of Najad in the East.

ہناد بن سری، ابواحوص، سعید بن مسروق، عبدالرحمن بن ابونعم، ابوسعید خدری سے روایت ہے کہ حضرت علی رضی اللہ عنہ اور میں نے حضرت رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو سونے کا ایک ٹکڑا بھیجا جو کہ مٹی میں شامل ہو چکا تھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اس کو چار آدمیوں کے درمیان تقسیم فرمایا وہ چار آدمی یہ ہیں (1) حضرت اقرع بن حابس (2) عینیہ بن بدر (3) علقمہ بن علاثہ عامری۔ اس کے بعد آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے قبیلہ بنی کلاب کے ایک شخص کو دیا پھر حضرت زید طان کو اور پھر قبیلہ بنی نبیان کے آدمی کو اس پر قریش ناراض ہوگئے اور ان کو غصہ آگیا اور کہنے لگے کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم لوگ نجد کے سرداران کو تو (صدقہ) دیتے ہیں اور ہم لوگوں کو نظر انداز کرتے ہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا میں نے اس واسطے ان کو دیا ہے کہ یہ لوگ تازہ تازہ مسلمان ہوئے ہیں اس لئے ان کے قلوب کو اسلام کی جانب متوجہ کرنے کے واسطے میں نے یہ کیا۔ اسی دوران ایک آدمی حاضر ہوا جس کی ڈاڑھی گھنی اور اس کے رخسار ابھرے ہوئے تھے اور اس کی آنکھیں اندر کو دھنسی ہوئی تھیں اور اس کی پیشانی بلند اور اس کا سر گھٹا ہوا تھا اور عرض کرنے لگا۔ اے محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تم خدا سے ڈرو۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا اگر میں بھی خداوند قدوس کی  نافرمانی کرنے لگ جاؤں تو وہ کون شخص ہے جو کہ خداوندقدوس کی فرماں برداری کرے گا اور کیا وہ میرے اوپر امین مقرر کرتا ہے اور تم لوگ محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو قابل بھروسہ خیال نہیں کرتے پھر وہ آدمی رخصت ہوگیا اور ایک شخص نے اس کو مار ڈالنے کی آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے اجازت مانگی۔ لوگوں کا خیال ہے کہ وہ حضرت خالد بن ولید تھے پھر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا اس شخص کی نسل سے اس طرح کے لوگ پیدا ہوں گے جو کہ قرآن کریم پڑھیں گے لیکن قرآن کریم ان کے حلق سے نیچے نہ اترے گا (یعنی قرآن کریم کا ان پر ادنی ٰ سا اثر نہ ہوگا) وہ لوگ دین اسلام سے اس طریقہ سے نکل جائیں گے جس طریقہ سے کہ تیر کمان سے نکل جاتا ہے۔ اگر ان کو میں نے پا لیا تو میں ان کو قوم عاد کی طرح سے قتل کر ڈالوں گا.سنن نسائی:جلد دوم:حدیث نمبر 489    حدیث متواتر حدیث مرفوع  مکررات 24

 It was narrated that Abu Saeed Al-Khudri said: “When he was in Yemen, ‘Ali sent a piece of gold that was still mixed with Sediment to the Messenger of Allah (Salallaho alayhay wa sallam) and the Messenger of Allah(Salallaho alayhay wa sallam)  distributed it among four People: Al-Aqra’ bin Habis Al-HanzalI, ‘Uyaynah bin Badr Al- Fazari, ‘Alqamah bin ‘Ulathah Al ‘Amiri, who was from Banu Kilab and Zaid At-Ta’i who was from Banu Nabhan. The Quraish” — he said one time “the chiefs of the Quraish” — “became angry and said: ‘You give to the chiefs of Najd and not to us?’ He said: ‘I only did that, so as to soften their hearts toward Islam.’ Then a man with a thick beard, prominent cheeks, sunken eyes, a high forehead, and a shaven head came and said: ‘Fear Allah, Muhammad!’ He said: ‘Who would obey Allah if I disobeyed Him? (Is it fair that) He has entrusted me with all the people of the Earth but you do not trust me?’ Then the man went away, and a man from among the people, whom they (the narrators) think was Khalid bin Al Walid, asked for permission to kill him. The Messenger of Allah (Salallaho alayhay wa sallam) said: ‘Among the offspring of this man will be some people who will recite the Qur’an but it will not go any further than their throats. They will kill the Muslims but leave the idol worshippers alone, and they will pass through Islam as an arrow passes through the body of the target. If I live to see them, I will kill them all, as the people of ‘Ad were killed.”.[7]

Proof No-2 that East of Affliction means Najad

The following two ahadith gives us a solid proof that the East of Affliction (Fitna) always means Najad in Ahadith.

The first ahadith tells that Horn of Satan is from the East

 

حدثنا أبو عبد الرحمن حدثنا سعيد حدثنا عبد الرحمن بن عطا عن نافع عن ابن عمر أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال اللهم بارك لنا في شامنا ويمننا مرتين فقال رجل وفي مشرقنا يا رسول الله فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم من هنالك يطلع قرن الشيطان ولها تسعة أعشار الشر. مسند احمد

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ ایک مرتبہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے دو مرتبہ یہ دعاء کی کہ اے اللہ ہمارے شام اور یمن میں برکتیں عطاء فرما ایک آدمی نے عرض کیا یا رسول اللہ ہمارے مشرق کے لیے بھی دعاء فرمائیے؟ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا وہاں سے توشیطان کا سینگ طلوع ہوتا ہے اور دس میں سے نو فیصد شر وہیں سے ہوتاہے۔ مسند احمد:جلد سوم:حدیث نمبر 1169

Narrated by Hazrat Abdullah Bin Umar(R.A) that once Dear Prophet Muhammad(Salalallaho alayhay wa sallam) prayed two times that "O Allah! Bestow Your blessings on our Yemen" "O Allah! Bestow Your blessings on our Shaam(Syria)".A person said, “O Allah’s Apostle! And also on our East.”.The Prophet(salallaho alayhay wa sallam) said, “There (in East)comes out the side of the head of Satan and 9 out of 10 (parts of) evil is from there .” Masnad Ahmad,Vol 3,Hadith 1169

 

حدثنا أزهر بن سعد أبو بكر السمان أخبرنا ابن عون عن نافع عن ابن عمر أن النبي صلى الله عليه وسلم قال اللهم بارك لنا في شامنا اللهم بارك لنا في يمننا قالوا وفي نجدنا قال اللهم بارك لنا في شامنا اللهم بارك لنا في يمننا قالوا وفي نجدنا قال هنالك الزلازل والفتن منها أو قال بها يطلع قرن الشيطان. مسند احمد

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ ایک مرتبہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے تین مرتبہ یہ دعاء کی کہ اے اللہ! ہمارے شام اور یمن میں برکتیں عطاء فرما، ایک آدمی نے عرض کیا یا رسول اللہ! ہمارے نجد کے لیے بھی دعاء فرمائیے؟ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا وہاں تو زلزلے اور فتنے ہوں گے، یایہ کہ وہاں سے توشیطان کا سینگ طلوع ہوتا ہے۔ مسند احمد:جلد سوم:حدیث نمبر 1500

Narrated by Hazrat Abdullah Bin Umar(R.A) that once Dear Prophet Muhammad(Salalallaho alayhay wa sallam) prayed three times that "O Allah! Bestow Your blessings on our Yemen" "O Allah! Bestow Your blessings on our Shaam(Syria)".A person said, “O Allah’s Apostle! And also on our Najad.”.The Prophet(salallaho alayhay wa sallam) said, “There (in Najad)comes out the side of the head of Satan and 9 out of 10 (parts of) evil is from there .” Masnad Ahmad,Vol 3,Hadith 1500

 

Conclusion :

 

We see both the ahadith are pointing towards the same incident and this proves that

East of Affliction =Najad

 

We also have another hadith about the same incident and again we see the word “Najad” is used instead of East

The Prophet said, “O Allah! Bestow Your blessings on our Sham! O Allah! Bestow Your blessings on our Yemen.” The People said, “And also on our Najd.” He said, “O Allah! Bestow Your blessings on our Sham (north)! O Allah! Bestow Your blessings on our Yemen.” The people said, “O Allah’s Apostle! And also on our Najd.” I think the third time the Prophet said, “There (in Najd) is the place of earthquakes and afflictions and from there comes out the side of the head of Satan.[8]

 

Dajjal followers from the East will be from an Arab tribe

 

The following hadith tells about the same incident described in the previous hadith.This hadith further tells that Dajjal will come among the offspring of Banu Tamim tribe from Najad.

 

أخبرنا محمد بن معمر البصري الحراني قال حدثنا أبو داود الطيالسي قال حدثنا حماد بن سلمة عن الأزرق بن قيس عن شريک بن شهاب قال کنت أتمنی أن ألقی رجلا من أصحاب النبي صلی الله عليه وسلم أسأله عن الخوارج فلقيت أبا برزة في يوم عيد في نفر من أصحابه فقلت له هل سمعت رسول الله صلی الله عليه وسلم يذکر الخوارج فقال نعم سمعت رسول الله صلی الله عليه وسلم بأذني ورأيته بعيني أتي رسول الله صلی الله عليه وسلم بمال فقسمه فأعطی من عن يمينه ومن عن شماله ولم يعط من وراه شيا فقام رجل من وراه فقال يا محمد ما عدلت في القسمة رجل أسود مطموم الشعر عليه ثوبان أبيضان فغضب رسول الله صلی الله عليه وسلم غضبا شديدا وقال والله لا تجدون بعدي رجلا هو أعدل مني ثم قال يخرج في آخر الزمان قوم کأن هذا منهم يقرون القرآن لا يجاوز تراقيهم يمرقون من الإسلام کما يمرق السهم من الرمية سيماهم التحليق لا يزالون يخرجون حتی يخرج آخرهم مع المسيح الدجال فإذا لقيتموهم فاقتلوهم هم شر الخلق والخليقة قال أبو عبد الرحمن رحمه الله شريک بن شهاب ليس بذلک المشهور. سنن نسائی:جلد سوم:حدیث نمبر 407 

محمد بن معمر بصری جرانی، ابوداؤد طیالسی، حماد بن سلمہ، الازرق بن قیس، شریک بن شہاب سے روایت ہے کہ مجھ کو تمنا تھی کہ میں حضرت رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے کسی صحابی سے ملاقات کروں۔ اتفاق سے میں نے عید کے دن حضرت ابوبرزہ اسلمی سے ملاقات کی اور ان کے چند احباب کے ساتھ ملاقات کی میں نے ان سے دریافت کیا کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے کچھ خوارج کے متعلق سنا ہے؟ انہوں نے فرمایا جی ہاں۔ میں نے رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے اپنے کان سے سنا ہے اور میں نے اپنی آنکھ سے دیکھا ہے کہ رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت اقدس میں کچھ مال آیا آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے وہ مال ان حضرات کو تقسیم فرما دیا جو کہ دائیں جانب اور بائیں جانب بیٹھے ہوئے تھے اور جو لوگ پیچھے کی طرف بیٹھے تھے ان کو کچھ عطاء نہیں فرمایا چنانچہ ان میں سے ایک شخص کھڑا ہوا اور عرض کیا اے محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے مال انصاف سے تقسیم نہیں فرمایا وہ ایک سانولے (یعنی گندمی) رنگ کا شخص تھا کہ جس کا سر منڈا ہوا تھا اور وہ سفید کپڑے پہنے ہوئے تھا یہ بات سن کر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم بہت سخت ناراض ہو گئے اور فرمایا خدا کی قسم! تم لوگ میرے بعد مجھ سے بڑھ کر کسی دوسرے کو (اس طریقہ سے) انصاف سے کام لیتے ہوئے نہیں دیکھو گے۔ پھر فرمایا آخر دور میں کچھ لوگ پیدا ہوں گے یہ آدمی بھی ان میں سے ہے کہ وہ لوگ قرآن کریم کی تلاوت کریں گے لیکن قرآن کریم ان کے حلق سے نیچے نہیں اترے گا وہ لوگ دائرہ اسلام سے اس طریقہ سے خارج ہوں گے کہ جس طریقہ سے تیر شکار سے فارغ ہو جاتا ہے ان کی نشانی یہ ہے کہ وہ لوگ سر منڈے ہوئے ہوں گے ہمیشہ نکلتے رہیں گے یہاں تک کہ ان کے پیچھے لوگ دجال ملعون کے ساتھ نکلیں گے۔ جس وقت ان لوگوں سے ملاقات کرو تو ان کو قتل کر ڈالو۔ وہ لوگ بدترین لوگ ہیں اور تمام مخلوقات سے برے انسان ہیں۔ سنن نسائی:جلد سوم:حدیث نمبر 407    حدیث متواتر حدیث مرفوع   مکررات 10

It was narrated that Sharik bin Shihab said: “I used to wish that I could meet a man among the Companions of The Prophet(salallaho alayhay wa sallam)  صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم and ask him about the Khawanj. Then I met Abu Barzah on the day of ‘Id, with a number of his companions. I said to him: ‘Did you hear the Messenger of Allah صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم mention the Khawarij?’ He said: ‘Yes. I heard the Messenger of Allah    صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم with my own cars, and saw him with my own eyes. Some wealth was brought to the Messenger of Allah صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم and he distributed it to those on his right and on his left, but he did not give anything to those who were behind him. Then a man stood behind him and said: “Muhammad! You have not been just in your division!” He was a man with black patchy (shaved) hair,t wearing two white garments. So Allah’s Messenger صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم, became very angry and said: “By Allah! You will not find a man after me who is more just than me.” Then he said: “A people will come at the end of time; as if he is one of them, reciting the Qur’an without it passing beyond their throats. They will go through Islam just as the arrow goes through the target. Their distinction will be shaving. They will not cease to appear until the last of them comes with Al-MasIh Ad Dajjál. So when you meet them, then kill them, they are the worst of created beings.”[9]

Another Hadith confirming the above hadith about the followers of Dajjal from the East(Najad)& from Banu Tamim

The following hadith is again telling about the same event.This hadith is further telling that the off springs of the same person Zul Khuwaisara(from Banu Tamim) will join Dajjal

 

رسول الله صلى الله عليه وسلم بدنانير فقسمها وثم رجل مطموم الشعر آدم أو أسود بين عينيه أثر السجود عليه ثوبان أبيضان فجعل يأتيه من قبل يمينه ويتعرض له فلم يعطه شيا قال يا محمد ما عدلت اليوم في القسمة فغضب غضبا شديدا ثم قال والله لا تجدون بعدي أحدا أعدل عليكم مني ثلاث مرات ثم قال يخرج من قبل المشرق رجال كان هذا منهم هديهم هكذا يقرون القرآن لا يجاوز تراقيهم يمرقون من الدين كما يمرق السهم من الرمية ثم لا يرجعون فيه سيماهم التحليق لا يزالون يخرجون حتى يخرج آخرهم مع الدجال فإذا لقيتموهم فاقتلوهم هم شر الخلق والخليقة حدثنا عفان حدثنا حماد بن سلمة أخبرنا الأزرق بن قيس عن شريك بن شهاب قال كنت أتمنى أن ألقى رجلا من أصحاب محمد صلى الله عليه وسلم يحدثني عن الخوارج فلقيت أبا برزة في يوم عرفة في نفر من أصحابه فذكر الحديث. مسند احمد

        

شریک بن شہاب رحمۃ اللہ علیہ کہتے ہیں کہ میری یہ خواہش تھی کہ نبی علیہ السلام کے کسی صحابی سے ملاقات ہو جائے اور وہ مجھ سے خوارج کے متعلق حدیث بیان کریں، چنانچہ یوم عرفہ کے موقع پر حضرت ابوبرزہ رضی اللہ عنہ سے ان کے چند ساتھیوں کے ساتھ میری ملاقات ہو گئی، میں نے ان سے عرض کیا اے ابوبرزہ! خوارج کے حوالے سے آپ نے نبی علیہ السلام کو اگر کچھ فرماتے ہوئے سنا ہو تو وہ حدیث ہمیں بھی بتائیے، انہوں نے فرمایا میں تم سے وہ حدیث بیان کرتا ہوں جو میرے کانوں نے سنی اور میری آنکھوں نے دیکھی۔ ایک مرتبہ نبی علیہ السلام کے پاس کہیں سے کچھ دینار آئے ہوئے تھے، نبی علیہ السلام وہ تقسیم فرما رہے تھے، وہاں ایک سیاہ فام آدمی بھی تھا جس کے بال کٹے ہوئے تھے، اس نے دو سفید کپڑے پہن رکھے تھے، اور اس کی دونوں آنکھوں کے درمیان (پیشانی پر) سجدے کے نشانات تھے، وہ نبی علیہ السلام کے سامنے آیا، نبی علیہ السلام نے اسے کچھ نہیں دیا، دائیں جانب سے آیا لیکن نبی علیہ السلام نے کچھ نہیں دیا، بائیں جانب سے اور پیچھے سے آیا تب بھی کچھ نہیں دیا، یہ دیکھ کر وہ کہنے لگا بخدا اے محمد! صلی اللہ علیہ وسلم آج آپ جب سے تقسیم کر رہے ہیں، آپ نے انصاف نہیں کیا، اس پر نبی علیہ السلام کو شدید غصہ آیا، اور فرمایا بخدا! میرے بعد تم مجھ سے زیادہ عادل کسی کو نہ پاؤ گے، یہ جملہ تین مرتبہ دہرایا پھر فرمایا کہ مشرق کی طرف سے کچھ لوگ نکلیں گے، غالبا یہ بھی ان ہی میں سے ہے، اور ان کی شکل وصورت بھی ایسی ہی ہوگی، وہ لوگ قرآن تو پڑھتے ہوں گے لیکن وہ ان کے حلق سے نیچے نہیں اترے گا، وہ دین سے اس طرح نکل جائیں گے جیسے تیر شکار سے نکل جاتا ہے، وہ اس کی طرف لوٹ کر نہیں آئیں گے، یہ کہہ کر نبی علیہ السلام نے اپنے سینے پر ہاتھ رکھا، ۔ ان کی نشانی یہ ہے کہ وہ سرمنڈے ہوں گے ہمیشہ نکلتے ہی رہیں گے یہاں تک کہ ان کا آخری گروہ دجال کے ساتھ نکلے گا جب تم ان سے ملو تو انہیں قتل کردو۔ تین مرتبہ فرمایا. وہ تمام مخلوق سے بدترین ہیں. گذشتہ حدیث اس دوسری سند سے بھی مروی ہے. مسند احمد:جلد نہم:حدیث نمبر 44           حدیث متواتر حدیث مرفوع

It was narrated that Sharik bin Shihab said: “I used to wish that I could meet a man among the Companions of The Prophet(salallaho alayhay wa sallam صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم and ask him about the Khawanj. Then I met Abu Barzah on the day of ‘Id, with a number of his companions. I said to him: ‘Did you hear the Messenger of Allah صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم mention the Khawarij?’ He said: ‘Yes. I heard the Messenger of Allah صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم with my own cars, and saw him with my own eyes. Some wealth was brought to the Messenger of Allah صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم and he distributed it to those on his right and on his left, but he did not give anything to those who were behind him. Then a man stood behind him and said: “Muhammad! You have not been just in your division!” He was a baclk man with patchy (shaved) hair,t wearing two white garments and sign of prostration between forehead. So Allah’s Messenger صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم became very angry and said: “By Allah! You will not find a man after me who is more just than me.”He(Salallaho alayhay wa sallam) repeated these words three times. Then he said: “A people will come at the end of time from the east; as if he is one of them and their appearance will also be like this man.They will be reciting the Qur’an without it passing beyond their throats. They will go through Islam just as the arrow goes through the target. Their distinction will be shaving. They will not cease to appear until the last of them comes with Al-MasIh Ad Dajjál. So when you meet them, then kill them, they are the worst of created beings.” [10]

 

We see that in the above hadith the same person Zul Khuwaisara of Banu Tamim is mentioned in the same incident. So it proves that Dajjal will join the Banu Tamim from Najad.

Another hadith about the appearance of Dajjal from the East (Najad)

 ( عن حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما) قال وسمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول سيخرج أناس من أمتي من قبل المشرق يقرون القرآن لا يجاوز تراقيهم كلما خرج منهم قرن قطع كلما خرج منهم قرن قطع حتى عدها زيادة على عشرة مرات كلما خرج منهم قرن قطع حتى يخرج الدجال في بقيتهم- مسند احمد

 اور میں نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا ہے کہ عنقریب میری امت میں سے مشرقی جانب سے کچھ ایسے لوگ نکلیں گے جو قرآن تو پڑھتے ہوں گے لیکن وہ ان کے حلق سے نیچے نہیں اترے گا جب بھی ان کی کوئی نسل نکلے گی اسے ختم کردیا جائے گا یہ جملہ دس مرتبہ دہرایا یہاں تک کہ ان کے آخری حصے میں دجال نکل آئے گا۔ مسند احمد:جلدسوم:حدیث نمبر2361

Narrated by Abdullah bin Omar that I heard Dear Prophet Muhammad(Salallaho alayhay wa sallam) saying that Soon people will appear from my Nation(Ummah) from the East who will be reading Quran but this will not pass below their throats.Whenever they will appear,they will be eleminated.Dear Prophet Muhammad(Salallaho alayhay wa sallam) repeated this 10 times untill in the last part of them Dajjal will appear among them.[11]

 

 

Please note that the same two characteristics are described about the aboive people i.e

1.They will read Quran but wont pass their throats

2.They will apparently worsip Allah much more than the Muslims

This exactly matches with the Ahadith of Zul Khuwaisara from Banu Tamim.

 

Further discussion about the Affliction from Najad is beyond the scope of this book but can be found at the other book called “The Army of Dajjal”.

 

The East of Dajjal afflictions is a hot climate area

 

The following hadith tells that the East of Dajjal’s army is a desert area or a Hot area as Camels are mentioned with it.

حدثنا عبد الرزاق أخبرنا عقيل بن معقل عن همام بن منبه قال قدمت المدينة فرأيت حلقة عند منبر النبي صلى الله عليه وسلم فسألت فقيل لي أبو هريرة قال فسألت فقال لي ممن أنت قلت من أهل اليمن فقال سمعت حبي أو قال سمعت أبا القاسم صلى الله عليه وسلم يقول الإيمان يمان والحكمة يمانية هم أرق قلوبا والجفا في الفدادين أصحاب الوبر وأشار بيده نحو المشرق- مسند احمد:

ہمام بن منبہ رحمتہ اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں ایک مرتبہ مدینہ منورہ حاضر ہوا میں نے مسجد نبوی میں منبر کے قریب ایک حلقہ درس دیکھا لوگوں سے پوچھا کہ یہ کس کا حلقہ ہے؟ لوگوں نے بتایا کہ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کا حلقہ ہے میں نے بھی حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے ایک مسئلہ پوچھا وہ کہنے لگے کہ تم کہاں سے آئے ہو؟ میں نے عرض کیا کہ میں اہل یمن میں سے ہوں یہ سن کر انہوں نے فرمایا کہ میں نے اپنے حبیب صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سناہے ایمان اور حکمت یمن والوں کی بہت عمدہ ہے یہ لوگ نرم دل ہوتے ہیں جبکہ دلوں کی سختی اونٹوں کے مالکوں میں ہوتی ہے اور اپنے ہاتھ سے مشرق کی جانب اشارہ فرمایا- مسند احمد:جلد چہارم:حدیث نمبر 371

Hamam bin Mamba reported that once I came to the city ofMadinah Munawara.I saw people gathered for learning near the pulpit.I asked about this gathering?People told me that this gathering for learning is by Sayyidna Abu Huraira.I also asked a Question from Abu Huraira.He asked,"From where have you come?"I said that I am from the Yemen.Hearing this he said that,"I have heard Dear Prophet Salallaho alayhay wa sallam saying that Faith and knowlege of the people of Yemen is ver good.They are soft hearted.However,the hardness of the hearts is among the owners of the camels & pointed towards the East[12]. 

The Hot climate area described in above hadith is related to Arab tribes

حدثنا يحيى عن إسماعيل حدثنا قيس عن أبي مسعود قال أشار رسول الله صلى الله عليه وسلم بيده نحو اليمن فقال الإيمان هاهنا الإيمان هاهنا وإن القسوة وغلظ القلوب في الفدادين عند أصول أذناب الإبل حيث يطلع قرنا الشيطان في ربيعة ومضر. مسند احمد

 حضرت ابو مسعود رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک مرتبہ اپنے دست مبارک سے یمن کی طرف اشارہ کر کے دو مرتبہ فرمایا ایمان یہاں ہے یاد رکھو! دلوں کی سختی اور درشتی ان متکبروں میں ہوتی ہے جو اونٹوں کے مالک ہوں جہاں سے شیطان کا سینگ نمودار ہوتا ہے یعنی ربیعہ اور مضر نامی قبائل میں ۔ مسند احمد:جلد نہم:حدیث نمبر 2385

It is narrated on the authority of Ibn Mas'ud that the Apostle of Allah (may peace and blessings be upon him) pointed towards Yemen with his hand and said: Verily Iman is towards this side, and harshness and callousness of the hearts is found amongst the rude owners of the camels who drive them behind their tails (to the direction) where emerge the two horns of Satan, they are the tribes of Rabi'a and Mudar.[13] 

 

Note : The present Saudi Rulers belong to Anizzah tribe which are direct desendants of Rabi’a tribe.[14].

One of Rabi’a son is called Anizzah from which the tribe of Anizzah descends.[15]

The East of Imam Mahdi’s Army is a Cold Climate Place

 

Check the following ahadith (repeated before) in which the word ICE is used when the forces of Imam Mahdi are mentioned

حدثنا محمد بن يحيى وأحمد بن يوسف، قالا: حدثنا عبد الرزاق عن سفيان الثوري، عن خالد الحذاء، عن أبي قلابة، عن أبي أسماء الرحبي، عن ثوبان؛ قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم:((يقتيل عند كنزكم ثلاثة كلهم ابن خليفة. ثم لا يصير إلى واحد منهم. ثم نطلع الرايات السود من قبل المشرق. فيقتلونكم قتلا لم يقتله قوم)).ثم ذكر شيئا لا أحفظه. فقال ((فإذا رأيتموه فبايعوه ولو حبوا على الثلج. فإنه خليفة الله، المهدي)).--في الزوائد: هذا إسناده صحيح. رجاله ثقات. ورواه الحاكم في المستدرك، وقال. صحيح على شرط الشيخين

ترجمۃ۔ حضرت ثوبان سے روایت ھے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا کہ تمھارے ایک خزانے کی خاطر تین شخص قتال کریں گے( اورمارے جائیں گے) تینوں آدمی حکمران کے بیٹے ھوں گے لیکن وہ خزانہ ان میں سے کسی کو نہیں ملے گا پھر مشرق کی جانب سے کالے جھنڈے نمودار ھوں گے وہ تم کو ایسا قتل کریں گے کہ یس سے قبل کسی نے ایسا قتل نہیں کیا ھوگا۔اس کے بعد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم نے کچھ باتیں ذکر فرمائں جو مجھے یاد نہیں پھر فرمایا ک جب تم ان کو دیکھو تو ان سے بیعت کر لو چاھے تمھیں گھٹنوں کے بل برف کے اوپر گھسٹ کر جانا پڑے کیونکہ وہ اللہ کے خلیفہ مہدی ھوں گے (رواہ حاکم مستد رک)۔

Thawban (R.A) reported that Dear Propet(salallaho alayhay wa sallam) said, “ Three people will fight for your treasure (and get killed).All three of them will be sons of a Ruler but none of them will get the treasure. Then Black Flags will appear from the East & will kill you as no one (in History) has killed you before. Then Dear Prophet(salallaho alayhay wa alay hesallam) said soemthing that I didn’t remember.Then again Dear Prophet(salallaho alayhay wa alay he sallam) said if you see him then give him your allegiance, even if you have to crawl over ice, because he is the Khalifah of Allah, the Mahdi.(The given hadith is Most Authentic(Saheeh) according to conditions of Saheeh Muslim & Saheeh Bokhari).[16]

 

FURTHER DISCUSSION IS BEYOND THE SCOPE OF THIS BOOK AND CAN BE FOUND IN MY BOOK CALLED

THE ARMY OF DAJJAL part-1

 

CONCLUSION

Ahadith have mentioned two types of Eastern locations. The one from where Imam Mahdi will come.The second Eastern location is where Dajjal will appear. These are differences among these two locations.

1.       Imam Mahdi’s Army will appear from the East with a cold climate and having snowfalls.

2.       Imam Mahdi’s army will appear from the East in the ancient region of  Khorasan.

3.       Dajjal will appear from the East having hot climate

4.       Dajjal will appear in the East from a place called Najad.

5.       Dajjal will be supported by the Arab tribes of Najad in the East such as Banu Tamim.

 

About the location of Khorasan,we shall discuss it in the next chapters.

 

 

 


 



[1] Hakim Mustadrak in the Kitab-al-fitan Hadith 8432

[2] Hakim Mustadrak in the Kitab-al-fitan Hadith 8432

[3] Ibn-e-Sheeba Kitab-al-fitan Hadith 136. Also Hakim Mustadrak ,Kitab-al-fitan Hadith 8395 can be checked at  http://www.iid-alraid.de/Hadeethlib/hadethb.html

[4]Sunan Ibn-e-Majah (Kitab-al-fitan) Hadith 4082.  The English translation is from Sign before the day of Judegment by Ibn Katheer available at http://www.khatm-e-nubuwwat.org/Books/book.htm

[5] Sunan Ibn Majah Kitab-al-fitan hadith No 4088

[6] Masnad Ahmad,Vol 3,Hadith 2361.

[7] Sunan Nisai,Vol 2,Hadith 489

[8] .”Saheeh Al-Bukhaari, Book of Tribulations and the End of the World, Hadeeth No. 6641

 

[9] Sunan Nisai,Vol 3,Hadith 407,Hadith Matwatar Marfu

[10] Masnad Ahmad,Vol 9,Hadith 44

[11] Masnad Ahmad,Vol 3,Hadith 2361

[12] Masnad Ahmad,Vol 4,Hadith 371.

[13] Hadith 083 found in 'The Book of Faith (Kitab Al-Iman)' of Sahih Muslim.

[14] Check Wikipedia.com for Rabi`ah and `Anizzah tribes.

[15] ^ Hamad Al-Jassir, "Hizzan", Compendium of the Lineages of the Settled Families of Nejd, pt. II, p. 889 (Arabic)

[16] Hakim Mustadrak Hadith 4084 Kitab-al-Fitan. 

Comments