sign9

Allah subhanahu wa Ta-ala gave the Kingdom of the world to POOR nation of Bani Israel as told in Quran 

وَأَوْرَثْنَا الْقَوْمَ الَّذِينَ كَانُوا يُسْتَضْعَفُونَ مَشَارِقَ الْأَرْضِ وَمَغَارِبَهَا الَّتِي بَارَكْنَا فِيهَا ۖ وَتَمَّتْ كَلِمَتُ رَبِّكَ الْحُسْنَى عَلَى بَنِي إِسْرَائِيلَ بِمَا صَبَرُوا ۖ وَدَمَّرْنَا مَا كَانَ يَصْنَعُ فِرْعَوْنُ وَقَوْمُهُ وَمَا كَانُوا يَعْرِشُونَ﴿007:137﴾

اور جو لوگ(بنی اسرائیل)  کمزور سمجھے جاتے تھے ان کو زمین (شام) کے مشرق ومغرب کا جس میں ہم نے برکت دی تھی وارث کر دیا اور بنی اسرائیل کے بارے میں ان کے صبر کی وجہ سے تمہارے پروردگار کا وعدہ نیک پورا ہوا﴿007:137﴾

And We made a people (i.e Bani Israel), considered weak (and of no account), inheritors of lands in both East and West -lands whereon We sent down Our blessings (137:7)

Prophecy in Hadith hints the same thing as in Quran(137:7)

Note that in the above verse the “Lands whereon We sent down Our blessings “means the Countries of Bilad-us-shaam[1](Syria)” which includes the holy Land of Elya(Jerusalem) also.

Now the Quran has told that poor Bani Israel will take over Jerusalm(137:7),the same is told in the following hadith about the Armies of Khurasan(that they would take over Jerusalem).

حدثنا قتيبة أخبرنا رشدين بن سعد عن يونس عن ابن شهاب الزهري عن قبيصة بن ذويب عن أبي هريرة قال:- قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: (يخرج من خراسان راياتٌ سودٌ فلا يردها شيءٌ حتى تنصب بإيلياء) سنن الترمذي أبواب الفتن عن رسول الله صلى الله عليه وسلم

خراسان ( سورج طلوع ہونے کی جگہ یعنی مشرق ) سے سیاہ جھنڈے نکلیں گے ، انہیں کوئی نہیں روک سکے گا، یہاں تک یہ ایلیاء ( بیت المقدس) میں نصب ہوں گے ۔ حوالہ۔ جامع ترمذی ،کتاب الفتن

Abu Hurairah (R.A.) says that Rasulullah (Sallallahu Alayhi Wa  alay he wa sallam) said: "(Armies carrying) black flags will come from Khorasan( Land of the Rising Sun meaning the East). No power will be able to stop them and they will finally reach Eela (Jerusalem) where they will erect their flags."[2]

 

Thus as Quran has told us that poor Bani Israel will take over Jerusalem,the above hadith(and also other ahadith e.g Hadith about Constaninople in Saheeh Muslim) further strengthens the fact that poor Bani Israel from Khurasan will take over Jerusalem in future also insha Allah.This is because

سُنَّةَ اللَّهِ فِي الَّذِينَ خَلَوْا مِنْ قَبْلُ ۖ وَلَنْ تَجِدَ لِسُنَّةِ اللَّهِ تَبْدِيلًا﴿033:062﴾

‏ جو لوگ پہلے گزر چکے ہیں ان کے بارے میں بھی خدا کی یہی عادت رہی ہے اور تم خدا کی عادت میں تغیر و تبدل نہ پاؤ گے ﴿033:062﴾

(Such was) the practice (approved) of Allah among those who lived aforetime: No change wilt thou find in the practice (approved) of Allah(33:62).

 

This is also told in the following verse

وَنُرِيدُ أَنْ نَمُنَّ عَلَى الَّذِينَ اسْتُضْعِفُوا فِي الْأَرْضِ وَنَجْعَلَهُمْ أَئِمَّةً وَنَجْعَلَهُمُ الْوَارِثِينَ﴿028:005﴾

اور ہم چاہتے تھے کہ جو لوگ(بنی اسرائیل)   ملک میں کمزور کر دئیے گئے ہیں ان پر احسان کریں اور ان کو پیشوا بنائیں اور انہیں (ملک کا) وارث کریں﴿028:005﴾

And We intended to favor those (Bani Israel) who were held as weak in the land, and to make them leaders and make them inheritors (28:05)

This will happen Again insha Allah

 This will happen once again. Once again the POOREST nation of the world, i.e. the Muslim Bani Israel of Afghanistan and Pakistan will be given the keys of the world insha Allah.No matter how much they are tortureted,killed and expelled from their homes as in the present situation.Infact this oppression will make them more worthy to be the chosen ones insha Allah.

 

Mahdi’s Army will be poor having no weapons, no shelter of home, no food.

The poverty  of Mahdi’s army is clear from the following Ahadith.

 

وحدثني محمد بن حاتم بن ميمون. حدثنا الوليد بن صالح. حدثنا عبيدالله بن عمرو. حدثنا زيد بن أبي أنيسة عن عبدالملك العامري، عن يوسف بن ماهك. أخبرني عبدالله بن صفوان عن أم المؤمنين؛
أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال "سيعوذ بهذا البيت - يعني الكعبة - قوم ليست لهم منعة ولا عدد ولا عدة. يبعث إليهم جيش. حتى إذا كانوا ببيداء من الأرض خسف بهم".
قال يوسف: وأهل الشام يومئذ يسيرون إلى مكة. فقال عبدالله بن صفوان: أما والله! ما هو بهذا الجيش.
قال زيد: وحدثني عبدالملك العامري عن عبدالرحمن بن سابط، عن الحارث بن ربيعة، عن أم المؤمنين. بمثل حديث يوسف بن ماهك. غير أنه لم يذكر فيه الجيش الذي ذكره عبدالله بن صفوان
۔صحیح مسلم ،کتاب الفتن

حضرت امّ المومنین عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہاء روایت کرتی ہیں کہ رسول پاک صلّی اللہ علیہ وسلّم نے فرمایا۔ قریب ہے کہ اس گھر یعنی خانہ کعبہ میں ایک (تہی دست) قوم پناہ لے گی جنکے پاس اپنے بچاؤ کیلئے نہ ھتیار ہوں گے نہ افرادی قوّت ۔(یعنی یہ قوم دنیاوی مال ودولت ،شوکت وہ ہشمت ،اور ھتیاروں و افرادی قوّت سے تہی دست ہوں گے)۔ اس (کمزور) قوم سے جنگ کیلئے ایک لشکر (ملک شام سے) چلے گا۔ یہاں تک کہ یہ لشکر جب (مکّہ و مدینہ کے درمیان) ایک چٹیل میدان میں پہنچے گا تو اسی جگہ زمین مین دھنسا دیا جائے گا ۔صحیح مسلم ،کتاب الفتن

 

Abdullah b. Safwan reported the Mother of the Faithful as saying that Allah's Messenger (may peace be upon him) said: They would soon seek protection in this House, viz. Ka'ba (the defenceless), people who would have nothing to protect themselves in the shape of weapons or the strength of the people. An army would be sent to fight (and kill) them and when they would enter a plain ground the army would be sunk in it. Yiisuf (one of the narrators) said: It was a people of Syria (hordes of Hajjaj) who had been on that day comin. towards Mecca for an attack (on 'Abdulllah b. Zubair) and Abdullah b. Safwan said: By God, it does not imply this army.[3]

حدثني محمد بن حاتم بن ميمون حدثنا الوليد بن صالح حدثنا عبيد الله بن عمرو حدثنا زيد بن أبي أنيسة عن عبد الملک العامري عن يوسف بن ماهک أخبرني عبد الله بن صفوان عن أم المؤمنين أن رسول الله صلی الله عليه وسلم قال سيعوذ بهذا البيت يعني الکعبة قوم ليست لهم منعة ولا عدد ولا عدة يبعث إليهم جيش حتی إذا کانوا ببيدا من الأرض خسف بهم قال يوسف وأهل الشأم يومذ يسيرون إلی مکة فقال عبد الله بن صفوان أما والله ما هو بهذا الجيش قال زيد وحدثني عبد الملک العامري عن عبد الرحمن بن سابط عن الحارث بن أبي ربيعة عن أم المؤمنين بمثل حديث يوسف بن ماهک غير أنه لم يذکر فيه الجيش الذي ذکره عبد الله بن صفوان- صحیح مسلم

محمد بن حاتم، ابن میمون، ولید بن صالح، عبیداللہ بن عمرو، زید بن ابی انیسہ، عبدالملک عامری، یوسف بن ماہک، عبداللہ بن صفوان، سیدہ ام المومنین سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا عنقریب ایک قوم اس گھر یعنی خانہ کعبہ کی پناہ لے گی جن کے پاس کوئی رکاوٹ نہ ہوگی نہ آدمیوں کی تعداد ہوگی اور نہ ہی سامان ہوگا ان کی طرف ایک لشکر بھیجا جائے گا جب وہ زمین کے ایک ہموار میدان میں ہوں گے تو انہیں دھنسا دیا جائے گا یوسف نے کہا شام والے ان دنوں مکہ والوں سے لڑنے کے لئے روانہ ہو چکے تھے عبداللہ بن صفوان نے کہا اللہ کی قسم وہ لشکر یہ نہیں- صحیح مسلم:جلد سوم:حدیث نمبر 2743, متفق علیہ  

 

Abdullah b. Safwan reported the Mother of the Faithful as saying that Allah's Messenger (may peace be upon him) said: They would soon seek protection in this House, viz. Ka'ba (the defenceless), people who would have nothing to protect themselves in the shape of weapons or the strength of the people. An army would be sent to fight (and kill) them and when they would enter a plain ground the army would be sunk in it. Yusuf (one of the narrators) said: It was a people of Syria (hordes of Hajjaj) who had been on that day coming towards Mecca for an attack (on 'Abdulllah b. Zubair) and Abdullah b. Safwan said: By God, it does not imply this army

حتى يأتى قوم من قبل المشرق معهم رايأت سود. فيسألون الخير، فلا يعطونه. فيقاتلون فينصرون. فيعطون ما سألوا. فلا يقبلونه. حتى يدفعوها إلى رجل من أهل بيتي فيملؤها قسطا. كما ملؤوها جورا. فمن أدرك ذلك منكم، فليأتهم ولو حبوا على الثلج)).

کتاب ۔الاشاعہ لاشراط الساعۃ ۔ مصنف۔ محمد برزنجی 240Page--

مشرق کی طرف سے ایک قوم کالے جھنڈوں کے ساتھ آے گی اور وہ لوگ (ضرورت کی وجہ سے) خیر(کھانا،پانی، کپڑا، ھتیار،پناہ گاہ، وغیرہ) کا مطالبہ کریں گے ، لوگ ان کو خیر نہیں گے تو وہ لوگ ان سے لڑیں گے اور ان پر غالب آجایں گے ، اب لوگ ان کے مطالبہ کو پورا کرنا چاہیں گے تو وہ اس کو قبول نہیں کریں گے حتی کہ وہ اس (خیر) کو میرے اہل بیت میں سے ایک شخص کے حوالے کر دیں گے جو زمین کو اسی طرح عدل و انصاف سے بھر دے گا جیسے لوگوں نے اس سے پہلے ظلم و ستم سے بھرا ہوگا ، سو تم میں سے جو اس کو پاے تو اس کے پاس آجاے اگرچہ برف پر گھسٹ کر آنا پڑے ۔

حوالہ کتاب۔الاشاعہ لاشراط الساعۃ۔مصنف۔ محمد برزنجی.. ۔صفح240

 Narrated by Hazrat Abdullah Bin Masood(raddi Allah anho) that Dear Propher (salallaho alayhay wa sallam) said: A Nation carrying black banners will come out of the east. They will ask people for Khair(food,water,shelter etc), but the people will refuse; they will fight until they are victorious, and the people do as they asked, but they will not accept it from them until they hand over power to a man from my household. Then the earth will be filled with fairness, just as it had been filled with injustice. If any of you live to see this, you should go to him even if you have to crawl across ice.[4]

This poor Army withour weapons is from Bani Ishaq(Bani Israel)

In the above hadith we saw that Mahdi army is having no weapons (in the beginning).Now if we check the hadith of Saheeh Muslim (about Armageddon with Christians and Conquest of Constantinople) we see that the Bani Ishaq(Bani Israel) also has no weapons.

This proves that the

Poor Mahdi Army in Kaabah is also from Bani Israel.

Please check the armless army of Mahdi attacking Constantinople in the following hadith.

 

حدثنا قتيبة بن سعيد. حدثنا عبدالعزيز (يعني ابن محمد) عن ثور (وهو ابن

زيد الديلي) عن أبي الغيث، عن أبي هريرة؛
أن النبي صلى الله عليه وسلم قال
"سمعتم بمدينة جانب منها في البر وجانب منها في البحر؟" قالوا: نعم. يا رسول الله! قال "لا تقوم الساعة حتى يغزوها سبعون ألفا من بني إسحاق. فإذا جاؤها نزلوا. فلم يقاتلوا بسلاح ولم يرموا بسهم. قالوا: لا إله إلا الله والله أكبر. فيسقط أحد جانبيها".
قال ثور: لا أعلمه إلا قال "الذي في البحر. ثم يقولوا الثانية: لا إله إلا الله والله أكبر. فيسقط جانبها الآخر. ثم يقولوا الثالثة: لا إله إلا الله والله أكبر. فيفرج لهم. فيدخلوها فيغنموا. فبينما هم يقتسمون المغانم، إذ جاءهم الصريخ فقال: إن الدجال قد خرج. فيتركون كل شيء ويرجعون

حضرت ابوہریرہ سے روایت ہے کہ ایک دن نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے صحابہ سے پوچھا کہ کیا تم نے کسی ایسے شہر کے بارے میں سنا ہے جس کے ایک طرف توسمندر ہے اور ایک طرف جنگل ہے؟ صحابہ نے عرض کیا کہ یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ! ہم نے اس شہر کا ذکر سنا ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا۔ قیامت اس وقت تک نہیں آئے گی جب تک کہ حضرت اسحق علیہ السلام کی اولاد میں سے ستر ہزار آدمی اس شہر کے لوگوں سے جنگ نہ کرلیں گے ۔ چنانچہ حضرت اسحاق کی اولاد میں سے وہ لوگ جب جنگ کے ارادے سے اس شہر میں آئیں گے تو اس شہر کے نواحی علاقے میں پڑاؤ ڈالیں گے اور پورے شہر کا محاصر ہ کرلیں گے لیکن وہ لوگ شہروالوں سے ہتھیاروں کے ذریعے جنگ نہیں کریں گے اور نہ ان کی طرف تیر پھینکیں گے بلکہ لا الہ الااللہ واللہ اکبر کا نعرہ بلند کریں گے اور شہر کے دو طرف کی دیواروں میں سے ایک طرف کی دیوار گر پڑے گا، اس موقع پر حدیث کے راوی ثور بن یزید رضی اللہ عنہ نے کہا کہ میرا خیال ہے کہ حضرت ابوہریرہ نے یہان سمندر کی جانب ولی دیوار کہا تھا۔ (یعنی میں یقین کے ساتھ تو نہی کہہ سکتاالبتہ مجھے یاد پڑتا ہے کہ حضرت ابوہریرہ نے یہا ٰۃ روایت کیا تھا کہ اس نعر ہ سے سمندر کی طرف والی دیوار گرپڑے گی ۔ بہرحال اس کے بع دحجور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے یہ ارشاد فرمایا کہ پھر وہ لوگ دوسری مرتبہ لا الہ الااللہ واللہ اکبر کا نعرہ بلند کریں گے تو ان کے لئے شہر میں داخل ہونے کا راستہ کشادہ ہوجائے گا اور وہ شہر مین داخل ہوجائیں گے پھر وہ مال غنیمت جمع کریں گے یعنی شہر میں جو کچھ ہوگا اس کو اپنے قبضے میں لے لیں گے اور اسمال غنیمت کو آپس میں تقسیم کر رہے ہوں گے کہ اچانک ان کے کانوں میں یہ آواز آئے گی کہ کوئی کہہ رہا ہے، دجال نکل آیا ہے (یہ آواز سنتے ہی وہ لوگ سب کچھ یعنی مال غنیمت وغیرہ کو چھوڑ چھاڑ کر دجال سے لڑنے کے لئے لوٹ پڑیں۔ (مسلم)

Abu Huraira reported Allah's Apostle  (may peace he upon him) saying: You have heard about a city the one side of which is in the land and the other is in the sea (Constantinople). They said: Allall's Messenger, yes. Therer upon he said: The Last Hour would not come unlesss seventy thousand[1] persons from Bani lshaq would attack it. When they would land there, they will neither fight with weapons nor would shower arrows but would only say:" There is no god but Allah and Allah is the Greatest," that one side of it would fall. Thaur (one of the narrators) said: I think that he said: The part by the side of the ocean. Then they would say for the second time:" There is no god but Allah and Allah is the Greatest" that the second side would also fall, and they would say:" There is no god but Allah and Allah is the Greatest," that the gates would be opened for them and they would enter therein and, they would be collecting spoils of war and distributing them amongst themselves that a noise would be heard and It would be said: Verily, Dajjal has come. And thus they would leave everything there and would turn to him.[5]

This poor Nation will be targeted long before the appearance of Imam Mahdi & Prophet Eisa(Alayhay salam)

 

The following Hadith further tells us that This Poor Nation from Afghanistan has no worldly riches but they have the treasure of Iman (True Faith) due to which they are Targeted by the enemies of Islam

 

Pity poor Taliqan (a region in Afghanistan) that at that place are treasures of Allah, but these are not of gold and silver but consist of people who have recognised Allah as they should have.[6] 

Note:

·         I have not confirmed the authencity of this hadith but I have written it since it does not go against the meaning of the authentic ahadith

The word Taliqan stands for the whole area and not just the small town of Taliqan


[1] Bilad-us-Shaam(Syria) stands for Syria,Lebanon,Part of Jordon,Israel,Jerusalem,Palestine all together

[2] Jamia Tirimdi (Chapter of Kitab-al-Fitan) Hadith 2371

[3] Saheeh Muslim Book 041, Hadith Number 6889 at http://www.usc.edu/schools/college/crcc/engagement/resources/texts/muslim/hadith/muslim/041.smt.html  also Hadith 6886 & 6889 has almost the same event.

[4] Al Asha by Muhammad Barzanji Page 240 ,Also Sunan Ibn Majah Hadith 4082 ,Kitab-al-Fitan & can be checked at  http://www.iid-alraid.de/Hadeethlib/hadethb.html . Also Page 10 in the Book Signs before the Day of Judgement by Ibn Kahtir. Also  Page 100 in book Islam Main Mahdi ka Tasawwer by Prof Yusuf Khan

 

[5] Saheeh Muslim, Kitaab al-Fitan,Hadith 2920  

[6] Al-Muttaqi al-Hindi, Al-Burhan fi Alamat al-Mahdi Akhir al-zaman, p.59

 

Comments